Baseerat Online News Portal

ایکناتھ شندے وزیر اعلی ،دیوندر فڈنویس نائب وزیر اعلی

 

بال ٹھاکرے اور آنند دیگھے کے نام سے حلف لیا ،بی جےپی فڈنویس کی ناراضگی دور کرنے میں کامیاب

ممبئی۳۰ ؍ جون (رئیس احمد) تقریباً دس روزہ اقتدار کی کشمکش محض چار گھنٹوں میں ڈرامائی پیش رفت کے ساتھ ختم ہوگئی۔ دیویندر فڈنویس مہاراشٹر کے نئے وزیر اعلیٰ ہوں گےایسا سب کو اندازہ تھا لیکن وزیر اعلی کے لیے ایکناتھ شندے کے نام کا خود فڈنویس نے اعلان کرکے سب کو چونکہ دیا ۔ اس کے بعد ایکناتھ شندے نے راج بھون کے دربار ہال میں شام ۷ ؍ بجکر ۳۰ ؍ منٹ پر وزیر اعلیٰ کے عہدے کا حلف لیا۔ گورنر بھگت سنگھ کوشیاری نے ایکناتھ شندے کو عہدے کا حلف دلایا۔ایکناتھ شندے نے حلف لیتے ہوئے کہا کہ بالاصاحب ٹھاکرے اور دھر م ویر آنند دیگھے کے آشیرواد سے، میں ایکناتھ سنبھاجی شندے قسم کھاتا ہوں…شندے نے رازداری کا حلف لیا۔ اس کے ساتھ ہی دیویندر فڈنویس نے نائب وزیر اعلیٰ کے عہدے کا حلف لیا۔ اس موقع پر بی جے پی کے ریاستی صدر چندرکانت پاٹل، پروین دریکر، سدھیر منگنٹیوار، آشیش شیلار، پنکجا منڈے اور بی جے پی کے سینئر لیڈر اور ایکناتھ شندے کے اہل خانہ موجود تھے۔فڈنویس کو وزیر اعلی نہیں بنائے جانے پر ان کے چہرے سے صاف ظاہر ہورہا تھا کہ وہ بی جے پی سے سخت ناراض ہیں ان کی باڈی لینگویج معمول کے مطابق نہیں لگ رہی تھی تاہم دو گھنٹوں میں تیز رفتار سیاسی پیش رفت ہوئی۔ اس کے بعد فڈنویس نے نائب وزیر اعلیٰ کے طور پر حلف لیا۔ ایساکرنے کا حکم پارٹی قیادت نے فڈنویس کو دیا تھا۔بی جے پی کے صدر جے پی نڈا نے کہا کہ ہمارے لیڈر دیویندر فڈنویس نے آج اعلان کیا کہ شیوسینا لیڈر ایکناتھ شندے مہاراشٹر کے وزیر اعلیٰ ہوں گے۔ ساتھ ہی انہوں نے اعلان کیا کہ وہ ذاتی طور پر کابینہ میں نہیں ہوں گے اور باہر سے حمایت کریں گے۔ ایکناتھ شندے کو بی جے پی کی مکمل حمایت حاصل ہوگی۔بی جے پی کی مرکزی قیادت نے فیصلہ کیا ہے کہ دیویندر فڈنویس حکومت میں رہیں اور عہدہ پر رہیں۔ اس کے لیے ہم نے ذاتی طور پر فڈنویس سے درخواست کی ہے اور مرکز نے ہدایت دی ہے کہ دیویندر فڈنویس نائب وزیر اعلیٰ کے عہدے کا چارج لیں اور مہاراشٹر کے لوگوں کی امنگوں کو پورا کرنے کے لیے سخت محنت کریں۔فڈنویس کاشندے کے نام کا اعلان کرنے کے بعدوزیر اعظم نریندر مودی نے انہیں دو بار فون کیا۔ مودی کے اصرار کے بعد فڈنویس نائب وزیر اعلیٰ بننے پر راضی ہو گئے۔ فڑنویس نے پارٹی قیادت سے کہاکہ مجھے شندے کی کابینہ میں کام کرنے کے بجائے پارٹی کی ترقی کے لیے کام کرنے کا موقع دیں۔ تاہم فڈنویس کا مطالبہ مسترد کر دیا گیا. اس کے بعد فڑنویس نے نائب وزیر اعلیٰ بننے کا مطالبہ مان لیا۔ ایکناتھ شندے کاایک لمبا سیاسی کیرئیر ہے جوکہ آنند دیگھے کے شاگرد رہے ہیں۔ایکناتھ شندے ۹؍ فروری ۱۹۶۴؍کو پیدا ہوئے ۔ مہاراشٹر کے ۲۰؍ویں وزیر اعلیٰ بنے۔ وہ مہاراشٹر کی حکومت میں شہری ترقیات اور عوامی تعمیرات (عوامی انڈرٹیکنگز) کے کابینہ وزیر تھے۔ممبئی کے پڑوسی شہر تھانے، مہاراشٹر کے کوپری-پچپاکھڑی حلقہ سے مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی میں مسلسل ۴؍بار منتخب ہوئے ہیں۔آنند دیگھے نے شندے کو سیاست میں متعارف کرایا گیا تھا اور ۲۰۰۱؍میں ان کی موت کے بعدآنند دیگھے کی میراث کے جانشین بنے۔ وہ ۲۰۰۴؍سے مسلسل چار میعادوں کے لیے ممبر قانون ساز اسمبلی کے طور پر منتخب ہوئے۱۹۹۷؍: تھانے میونسپل کارپوریشن میں پہلی بار کارپوریٹر کے طور پر منتخب ہوئے۔۲۰۰۱؍تھانے میونسپل کارپوریشن میں قائد ایوان کے عہدے کے لیے منتخب ہوئے۔۲۰۰۲؍ دوسری بار تھانے میونسپل کارپوریشن کے لیے منتخب ہوئے۔۲۰۰۴؍ پہلی بار مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے۔۲۰۰۵؍شیوسینا کا تھانے ضلعی سربراہ مقرر کیا گیا۔ پارٹی میں اس طرح کے مائشٹھیت عہدے پر تعینات ہونے والے پہلے ایم ایل اے۲۰۰۹؍ دوسری بار مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے۲۰۱۴؍تیسری بار مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے۔اکتوبر ۲۰۱۴؍دسمبر ۲۰۱۴؍مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی کے اپوزیشن لیڈر،مہاراشٹر ریاستی حکومت میںپی ڈبلیو ڈی محکمہ تعمیرات عامہ کے کابینہ وزیر، تھانے ضلع کے سرپرست وزیر،شیو سینا پارٹی کا رہنما مقرر،مہاراشٹر ریاستی حکومت میں صحت عامہ اور خاندانی بہبود کے کابینہ وزیررہے۔۲۰۱۹؍ لگاتار چوتھی بار مہاراشٹر قانون ساز اسمبلی کے لیے منتخب ہوئے۔۲۸؍نومبر ۲۰۱۹؍مہاراشٹرکے چیف منسٹر ادھو ٹھاکرے کی سربراہی میں مہا وکاس اگھاڑی کے تحت کابینہ کے وزیر کے طور پر حلف لیااس کے بعد شہری ترقی اور تعمیرات عامہ کے وزیر مقرر، وزیر داخلہ (قائم مقام) مقرر ،تھانے ضلع کا سرپرست وزیر مقرر۳۰؍جون ۲۰۲۲؍مہاراشٹر کے وزیر اعلی کے طور پر حلف لیا۔

You might also like