Baseerat Online News Portal

چین اور پاکستان کے درمیان شمسی توانائی میں تعاون ناگزیر ہے۔چینی میڈیا

چین کی جامع پالیسیوں اور جدت نے شمسی توانائی کو مزید سستا بنا دیا ہے۔

چین(انٹرنیشنل ڈسک)گلوبل ٹائمز میڈیا یورپ کے مطابق چین اور پاکستان کے درمیان شمسی توانائی  میں تعاون ناگزیر ہے،چین نے دنیا بھر میں سولر فوٹوولٹکس ( پی وی ) کی لاگت کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے،سولر پی وی پلانٹس میں 144 ملین ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری میں سے 125 ملین ڈالر چین کی ہے۔پاکستان اور اس کے نجی شعبے کو چین کے ساتھ شمسی توانائی  تعاون کو مزید مضبوط بنا کر سنہری موقع سے فائدہ اٹھانا چاہیے،چینی کمپنیاں پاکستان کی حکومت اور اس کے نجی شعبے کی شمسی توانائی کی تنصیب اور پیداوار میں مدد کر رہی ہیں۔گوادر پرو کی رپورٹ کے مطابق   حکومت پاکستان کو چاہیے کہ وہ چین سے توانائی کے خسارے پر قابو پانے کے لیے مدد حاصل کرے کیونکہ یہ ملک دنیا میں صاف توانائی خصوصاً شمسی اور ہوا کے سب سے بڑے فروغ دینے والے اور سرمایہ کاروں میں سے ایک ہے۔ گوادر پرو کے مطابق بین الاقوامی توانائی ایجنسی نے کہا کہ چین کی جامع پالیسیوں اور جدت نے شمسی توانائی کو مزید سستا بنا دیا ہے،چین نے دنیا بھر میں سولر فوٹوولٹکس (PV) کی لاگت کو کم کرنے میں اہم کردار ادا کیا ہے، جس میں صاف توانائی کی منتقلی کے متعدد فوائد ہیں، اس طرح حکومت پاکستان اور اس کے نجی شعبے کو چین کے ساتھ شمسی توانائی کے تعاون کو مزید مضبوط کرنے کے لیے اس سنہری موقع سے فائدہ اٹھانا چاہیے گوادر پرو  کے مطابق  چین صحرائے گوبی اور دیگر بنجر علاقوں میں  ونڈ اور شمسی توانائی کے بڑے منصوبوں کی دوسری کھیپ کی تعمیر کو تیز کرنے کا ارادہ رکھتا ہے جسے پاکستان کے صحرائی علاقوں میں بھی نقل کیا جا سکتا ہے۔ پاکستان کے بورڈ آف انویسٹمنٹ کی تازہ ترین شائع شدہ رپورٹ کے مطابق سولر پی وی پلانٹس میں 144 ملین ڈالر کی غیر ملکی سرمایہ کاری میں سے 125 ملین ڈالر چین کی ہے جو کل کا تقریباً 87 فیصد ہے۔

پاکستان میں 530 میگاواٹ کی مجموعی پیداواری صلاحیت میں سے 400 میگاواٹ (75 فیصد) قائداعظم سولر پارک سے پیدا ہوتی ہے، جو پاکستان میں شمسی توانائی پیدا کرنے کی صلاحیت رکھنے والا پہلا پاور پلانٹ ہے، جو پنجاب حکومت کی ملکیت ہے اور چین کی ٹیبیان الیکٹرک نے بنایا ہے۔
اپریٹس سنکیانگ نیو انرجی کمپنی 400,000 سولر پینلز کے ساتھ 200 ہیکٹر فلیٹ ریگستان پر پھیلے ہوئے  یہ پلانٹ ابتدائی طور پر پاکستان کے لیے 100 میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت کے ساتھ شروع کیا گیا تھا۔ مزید برآں  پاکستان میں 3 نئے منصوبوں کے ساتھ 300 میگاواٹ بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت میں اضافہ ہوا ہے اور ملک میں 1,050 میگاواٹ کی مجموعی صلاحیت کے ساتھ قائداعظم سولر پارک کے لیے متعدد  منصوبے رپورٹ کیے گئے ہیں جنہیں جلد از جلد شروع کیا جانا چاہیے اور جلد از جلد اس پر عملدرآمد کا بہترین حل چینی کمپنیوں سے مدد لینا ہے۔
اس طرح، شمسی توانائی کے تعاون میں اضافہ ملک میں موجودہ حکومت کا چمتکارہونا چاہیے۔ گوادر پرو کے مطابق چینی کمپنیاں پاکستان میں بہت سے پی وی پروجیکٹس جیسے کے پی میں منی سولر گرڈز اور اے ڈی بی  ایکسیس ٹو کلین انرجی پروگرام کے لیے بھی بڑے سپلائرز ہیں، اس کا مطلب یہ ہے کہ چینی کمپنیاں پاکستان کی حکومت اور اس کے نجی شعبے کی شمسی توانائی کی تنصیب اور پیداوار میں مدد کر رہی ہیں۔

You might also like