ہندوستان

طلبہ مدارس اسلامیہ کانفرنس میں دارالعلوم وقف کا کوئی اشتراک نہیں

سوشیل میڈیا پر تشہیر کے بابت دارالعلوم وقف دیوبند کی وضاحت
دیوبند، ۳۰؍جولائی(پریس ریلیز) ۱۷؍۱۸؍اگست کو دیوبند میں طلبہ مدارس اسلامیہ کے عنوان سے ایک کانفرنس کے انعقاد کی تشہیر ان دنوں سوشل میڈیا پر خوب ہورہی ہے۔ تعجب خیز امر یہ ہے کہ اس پروگرام کے انعقاد کی تشہیر باشتراک دارالعلوم وقف دیوبند کی جارہی ہے جب کہ دارالعلوم وقف دیوبند کا اس قسم کے کسی پروگرام میں اشتراک نہیں ہے۔ ادارہ کی جانب سے جاری پریس ریلیز میں اس کی وضاحت کی گئی کہ مدارس اسلامیہ کے عنوان سے باشتراک دارالعلوم وقف دیوبند ایک پروگرام کے انعقاد کی تشہیر کی جارہی ہے جب کہ دارالعلوم وقف دیوبند کا اس پروگرام سے کسی بھی قسم کا اشتراک نہیں ہے۔ اس پروگرام کے لئے مولانا نذر الحسن خاں ندوی کے دستخط سے طلبہ کی ایک تنظیم اسٹوڈینٹس اسلامک آرگنائزیشن آف انڈیا کی جانب سے مہتمم دارالعلوم وقف دیوبند حضرت مولانا محمد سفیان قاسمی صاحب مدظلہٗ کے نام ایک دعوت نامہ برائے شرکت پروگرام موصول ہوا تھا، جس پر منظوری حاصل کئے بغیر مذکورہ تنظیم نے ایک سیشن کی صدارت حضرت مہتمم صاحب کے نام درج کردی ہے جب کہ حضرت مہتمم صاحب نے نہ کوئی منظوری دی ہے اور نہ ہی اس میں شرکت کا کوئی عندیہ ظاہر کیا ہے۔ جاری پریس نوٹ میں کہا گیا ہے کہ دارالعلوم وقف دیوبند بصراحت اس کی وضاحت کرتا ہے کہ ادارہ کا مذکورہ پروگرام سے کسی طرح کا کوئی تعلق نہیں ہے۔کسی ذمہ دارانہ پروگرام میں ادارہ اورادارہ کے ذمہ داروں کے ناموں کی بلاجازت تشہیر اخلاقی قدروں کو پامال کرتی ہے۔ اگر باشتراک دارالعلوم وقف دیوبند ادارہ کے کسی بھی ذمہ دار کے نام کی توضیح کے ساتھ کسی پروگرام کے انعقاد کی تشہیر کی جائے تو ادارہ اور ادارہ کے ذمہ داروں کا اس پروگرام سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ پریس نوٹ میں مزید کہا گیا کہ اشتہار میں اس پروگرام کے لئے جن عناوین کو موضوع بحث بنایا گیا ہے وہ عناوین انتہائی حساس ہیں۔ ان تمام حساس عناوین پر تمام مدارس اسلامیہ کی تائید کے ساتھ دارالعلوم دیوبند بھرپور قیادت و رہنمائی کا فریضہ انجام دے رہا ہے۔ ایسی صورت میں ان موضوعات کو موضوع بحث بنا کر دیوبند کی سرزمین پر کسی بھی تنظیم کی جانب سے پروگرام کا انعقاد کرنا ملت میں انتشار و افتراق کا باعث ہوسکتا ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker