ہندوستان

ذاکر نائیک کو تین سال میں ۶۰کروڑ غیر ملکوں سے ملے

ممبئی پولس مبلغ اسلام کی ذاتی کمپنیوں کی بھی چھان بین کررہی ہے
ممبئی ، ۱۱؍اگست: (بی این ایس) ممبئی پولیس کی تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ ذاکر نائیک کی چار کمپنیاں بھی ہیں، جس کے ڈائریکٹر ان کے خاندان کے افراد ہیں۔واضح رہے کہ ذاکر نائک کے بارے میں ابھی تک صرف یہی بات عام تھی کہ وہ ڈونگري میں واقع اسلامک ریسرچ فاؤنڈیشن (IRF) کے بانی ہیں اس کے علاوہ ان کا ایک ایجوکیشن ٹرسٹ بھی ہے۔انگریزی اخبار ٹائمز آف انڈیا میں شائع خبر کے مطابق پولیس نے پیسوں کے لین دین کی تحقیقات کی تھی اور ٹرانزیکشن کی مکمل معلومات حاصل کی۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ‘ہمیں ابھی تک یہ پتہ نہیں چلا ہے کہ یہ پیسہ کس مقصد کے لئے ان کے اکاؤنٹس میں جمع کرایا گیا ہے تاہم تفتیشی افسر نے واضح کیا کہ جن بینک اکاؤنٹس میں پیسہ جمع کرایا گیا ہے وہ نائیک کے این جی او اسلامک ریسرچ فاؤنڈیشن کے نہیں ہیں بلکہ نائیک کے ذاتی اکاؤنٹ ہیں۔ تفتیشی افسر کا کہنا ہے کہ ‘ہم ذاکر نائیک سے اس معاملے میں پوچھ گچھ کر سکتے ہیں۔ ہم آمدنی کے ذرائع، بینک اکاؤنٹس میں پیسہ جمع کرانے والوں اور نائیک کے درمیان تعلقات کی بھی تحقیقات کریں گے۔ایک پولیس افسر کے بتایا کہ محکمہ انکم ٹیکس سے تفصیلی معلومات طلب کی گئی ہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker