ہندوستان

مسلم پرسنل لا بورڈکےعاملہ کی میٹنگ ندوہ میں کل

بابری مسجدسمیت دیگر سلگتے مسائل پربحث ہوں گے
خواتین ونگ کومزیدمضبوط کیاجائے گا، غلط فہمیوں کے ازالہ کے لیے سوشل میڈیاپرتحریک تیزکرنے پرغوروخوض کاامکان
لکھنؤ،۱۴؍اپریل(نمائندہ) ہندوستانی مسلمانوں کی اہم اور نمائندہ تنظیم آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے کل شروع ہونے والی اہم میٹنگ میں طلاق ثلاثہ اور ایودھیا تنازعہ کے بات چیت کے ذریعے حل سمیت کئی اہم مسائل پر بات چیت ہو گی۔بورڈ کے سینئر رکن مولانا خالد رشید فرنگی محلی نے آج میڈیا کو بتایا کہ بورڈکے قومی مجلس عاملہ کا اجلاس آئندہ 15اور 16؍اپریل کوندوہ العلماء لکھنؤ میں منعقد کیا جائے گا واضح ہوکہ کل ہی بورڈنے لاء کمیشن سے ملاقات کرکے دوٹوک لہجے میں کسی بھی طرح سے مذہبی امورمیں مداخلت اوریونیفارم سول کوڈکی مخالفت کی ہے اوراپنے موقف کی حمایت میں پونے پانچ کروڑدستخط کی ہارڈسک بھی پیش کی ہے۔اجلاس کے ایجنڈے میں بنیادی طور پر تین طلاق کو لے کر سپریم کورٹ میں چل رہے کیس کی پیروی اور بابری مسجدتنازعہ کو بات چیت کے ذریعے حل کرنے کی سپریم کورٹ کی تجویز پر غوروخوض کیا جائے گا، ساتھ ہی بورڈ کی خاتون شاخ کومزید مضبوط کرنے کے طورطریقوں پر بھی بحث ہوگی۔قابل ذکرہے کہ تین طلاق کو لے کر سپریم کورٹ میں زیرِالتوامقدمے میں آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ کے ایک فریق ہے۔مولانا خالدرشید فرنگی محلی نے بتایا کہ بابری مسجد کا مسئلہ انتہائی اہم ہے اور اجلاس میں فیصلہ کیا جا سکتا ہے کہ اس کا بات چیت کے ذریعے حل کا کوئی راستہ کھلا ہے یا نہیں۔انہوں نے بتایا کہ بورڈکے صدر مولانا رابع حسنی ندوی کی صدارت میں ہونے والی یہ میٹنگ 15؍اپریل کی شام کو شروع ہوگی۔انہوں نے بتایا کہ بورڈ مسلم پرسنل لا کو لے کر سماج میں پھیلی غلط فہمیوں کے ازالے کے لیے سوشل میڈیا کے ذریعے عام لوگوں سے جڑے گا اور شرعی قوانین کو صحیح شکل میں لوگوں کے سامنے پیش کیا جائے گا۔بورڈ کی میٹنگ میں اس کے لیے ایکشن پلان تیار کیا جائے گی۔مولانا فرنگی محلی نے بتایاکہ اس اجلاس میں گزشتہ دنوں کولکا تہ میں ہوئے اجلاس میں لیے گئے فیصلوں کو عملی جامہ پہنانے کے طریقوں پرغورکئے جانے کے ساتھ ساتھ بورڈ کی مختلف کمیٹیوں کے رپورٹیں بھی پیش کی جائیں گی۔اس کے علاوہ ان کمیٹیوں کو سرگرم بنانے کے طورطریقوں پر بھی بات ہوگی۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker