Baseerat Online News Portal

کیا صرف زندہ گائے ہی عقیدت کے لائق ہے مردہ نہیں

سیکو لر ہندوستان کی عوام کا گؤرکشکو ںسے سوال
گؤ ( گائے ) ماتا کی محبت کے نام پر دہشت کا کاروبار کرنے والے گؤ رکشکو کے منہ پر شیخ شریف کا طمانچہ
گذ شتہ شب سے لاوارث پڑی گائے کی نعش کوشہر کے باہرکیا دفن
بیڑ ( ۱۷/ اپریل ….محمد قمر الایمان خان یو سف زئی ) اِ ن دنوں پورا ملک گائے کی سیا ست کی آگ میں جھلس پڑ رہا ہے گذ شتہ سال جہاں گائے کی محبت میں گؤ رکشکو سے دادری کے اخلاق کو قتل کر دیا تھا وہیں امسال راجستھان کے پہلو خان کو گائے کی محبت کرنے والے گؤ رکشکو کے ہاتھوں اپنی جان گنوانی پڑی تھی اور گذ شتہ سال سے لے کر آج تک گا ئے کی سیا ست میں انگنت لوگ اس کا شکار ہو تے دکھائی دیئے ہیں ، تا ہم ایک سوال یہاں یہ بھی پیدا ہوتا ہے کہ گؤ ماتا کی محبت کرنے والے گؤ رکشکو کے لئے گائے جنتی اُس کی زندگی میں دکھائی دے رہی ہے کیا وہی گائے مرنے کے بعد بھی گؤ رکشکو کے لئے اہم سمجھی جا تی ہے اور گائے کے مرنے کے بعد کیا گؤ رکشک اُس کی آخری رسومات ادا کرتے ہیں تا پھر اُسے ویسی ہی مردہ حالت میں چھوڑ جاتے ہیں اس سوال کا پیدا ہونا فطری عمل ہے کیونکہ گائے کو ہندو مذہب میں اہم درجہ حاصل ہے یہی وجہ ہے کہ جنتا اُسے کے زندہ رہنے پر اُس کا احترام کیا جانا چاہئے اُتنا ہی اُس کے مرنے کے بعد بھی احترام لازمی ہو نا چاہے تا ہم آج بیڑ ضلع کے آشٹی میں پیش آئی ایک واردات نے گؤ رکشکو کی گائے کے تعلق سے محبت اور عقیدت کی نہ صرف پول کھول کر رکھ دی ہے بلکہ اسی واردات نے گؤرکشکو کے منہ پر کرارا طمانچہ بھی مار دیا ہے کیوں کہ گؤ رکشا کے نام پر جس خاص مذہب اسلام کے ماننے والے مسلمانوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے اُس ہی مذہب سے تعلق رکھنے والے ایک رکن بلدیہ نے بی جے پی کے رکن اسمبلی بھیم راو دھونڈے کی مہیش کیش کریڈٹ سو سائٹی کے روبرو گذ شتہ شب سے مر کر پڑی رہنے والی گائے کو بلدیہ کے عملے کے مدد سے شہر کے باہر لے جاکر اُسے دفن کر دیا ہے حالانکہ یہ کام گؤ رکشا کا ہوا کھڑا کرنے والی بی جے پی کے لیڈران اور گؤ رکشا کے نام پر مخصوص مذہب کے ماننے والوں پر حملہ کرنے کو کرنا چاہے تھا تا ہم مرنے کے بعد ’’ یہ ماں ‘‘ ہمارے کس کام کی کے مصداق اُسے مردہ حالت میں دیکھ کر صرف تماشائی کا کر دار ادا کیا گیا ایسی عقیدت ، ایسی محبت اور ایسی سیا ست پر سوائے افسوس کے اور کیا بھی کیا جا سکتا ہے ۔اس ضمن میں دیگر تفصیلات کے مطابق بیڑ ضلع کے آشٹی کے رکن اسمبلی بھیم راو دھونڈے کے مہیش کیش کریڈیٹ سو سائٹی کے روبرو ایک معمر گائے کی رحلت ہو گئی تھی اور اُس گائے کی نعش کیش کر یڈیٹ سو سائٹی کے روبرو ہی پڑ ی ہوئی تھی حالانکہ جس علا قے میں یہ کیش کریڈیٹ سو سائٹی واقع ہے وہاں سے روزانہ سینکڑوں لوگوں کی آوا جاہی دیکھی جا تی رہی ہے تا ہم با وجود اس کے کسی کو گؤماتا کی نعش کی مناسب جگہہ دفن کرنے یا شہر کے باہر لے جاکر چھوڑ نے کی توفیق نہیں ہوئی ، جب یہ نعش نگر پنچایت کے رکن بلدیہ شریف شیخ کے نظر میں آئی تو انھوں نے الصبح نگر پنچایت کے عملے کو ہمراہ لے کر نعش ایک ٹرالی کے ذریعے شہر کے باہر لے جا کر دفن کردی ، شریف شیخ کے اس اقدام کی شہر بھر میں سہرانہ ہو رہی ہے جب کہ اُن کا یہ اقدام گؤ ماتا کے نام کا سہارا لے کر ہنگامہ آرائی کرنے والوں کے منہ پر کرارا طمانچہ بھی سمجھا جا سکتا ہے

You might also like