ہندوستان

حکومت میری آواز بند کرنا چاہتی ہے:چدمبرم

رہائش گاہ سمیت کئی ٹھکانوں پر سی آبی آئی کے چھاپوں پر کانگریس کے سینئرلیڈرسخت ناراض
چینئی ،۱۶؍ مئی :کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق وزیر خزانہ پی چدمبرم اور ان کے بیٹے كارتی چدمبرم کی چنئی میں واقع رہائش گاہ سمیت کئی دیگر ٹھکانوں پر مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) نے آج چھاپے مارے ۔سی بی آئی نے کل ان کے خلاف ایف آئی آر درج کی تھی۔ سابق وزیر خزانہ کے کرائی کڑی رہائش کے علاوہ دیگر مقامات پر بھی چھاپے مارے گئے۔ ذرائع کے مطابق یہ چھاپے آئی این ایکس میڈیا گروپ کو غیر ملکی سرمایہ کاری کی منظوری دلانے کے معاملے میں كارتی چدمبرم کے مبینہ ملوث ہونے کے سلسلے میں مارے گئے ہیں ۔ گزشتہ 17 اپریل کو انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) نے 40 کروڑ روپے سے زیادہ کی رقم کے معاملہ میں غیرملکی زر مبادلہ سے متعلق قانون (فیما) کی خلاف ورزی کی پاداش میں كارتی چدمبرم اور ان سے مبینہ طور پر منسلک کمپنی کو وجہ بتاو نوٹس جاری کیا تھا۔ ان کے خلاف ایئر سیل-میکسس کیس میں منی لانڈرنگ کے الزامات کی بھی جانچ کی جا رہی ہے۔کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق وزیر پی چدمبرم نے اپنے اور اپنے بیٹے کارتی چدمبرم کے چنئی میں واقع رہائش گاہ سمیت کئی دیگر ٹھکانوں پر مرکزی تفتیشی بیورو(سی بی آئی)کے چھاپے مارنے کی کارروائی پر سخت رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت ان کی آواز کو دبانا اور ان کے قلم کو روکنا چاہتی ہے۔یہ چھاپے آئی این ایکس میڈیا گروپ کو غیر ملکی سرمایہ کاری کی منظوری دلانے کےمعاملے میں کارتی چدمبرم کے مبینہ طورپر ملوث ہونے کے ضمن میں مارے گئے ہیں۔گزشتہ 17اپریل کو انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ(ای ڈی)نے 40کروڑ روپے سےبھی زیادہ سے منسلک فورن ایکسچینج میجنمنٹ ایکٹ (فیما)کی خلاف ورزی کے سلسلے میں کارتی چدمبرم اور ان سے مبینہ طورپر متعلق کمپنی کو وجہ بتاؤ نوٹس جاری کیا تھا۔ان کے خلاف ایئرسیل-میکسس کیس میں منی لانڈرنگ کے الزامات کی بھی جانچ کی جارہی ہے۔ چدمبرم نے ایک بیان جاری کرکے کہا ،مرکزی حکومت سی بی آئی اور دیگر ایجنسیوں کا استعمال میرے بیٹے اور اس کے دوستوں کے خلاف کررہی ہے۔سابق مرکزی وزیر نے کہا،حکومت کا ارادہ میری آواز کو بند کرنا اور مجھے لکھنے سے روکنا ہے جیسا کہ اپوزیشن پارٹیوں کے لیڈران ،صحافیوں ،کالم لکھنے والوں،غیر سرکاری تنظیموں اور سول سوسائٹی اداروں کے معاملوں میں کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔انہوں نے کہا کہ میں بولنا اور لکھنا جاری رکھوں گا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker