ہندوستان

میانمار میں جاری ظلم و تشدد حکومت اور فوج کی دہشت گردی کے

خلاف سہارنپور کے مسلمانوں کا احتجاج ، صدر جمہوریہ ہند کو میمورنڈم ارسال
سہارنپور۔۱۲؍ ستمبر(سمیر چودھری)آج یہاں بڑی تعداد میں لوگوں نے میانمار حکومت کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے ایک میمورنڈم صدر جمہوریہ ہند کوارسال کیا،جس میں روہنگیا مسلمانوں کو تحفظ فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ میانمار حکومت سے اپنے تعلقات ختم کرنے اور انسانیت کی بنیاد پر اس معاملہ کو اقوامتحدہ میں اٹھانے کامطالبہ کیاگیا۔ مظاہرعلوم وقف سہارنپورکے عربی چوک سے مظاہرعلوم وقف کے استاذ مولانا ریاض ندوی کی قیادت میں میانما ر حکومت کے خلاف نکالے گئے اس مارچ میں بڑی تعداد میں لوگوں نے شرکت کرکے روہنگیاں مسلمانوں سے اپنی ہمدردی کااظہارکیا۔ یہ مارچ چلکانہ بس اسٹینڈ جھوٹے والان سے ہوتے ہوئے گول کوٹھی پہنچا جہاں ایس پی سٹی راجیش کمار اور ایڈیشنل ایس پی سریندر داس کے توسطہ سے ایک میمورنڈم صدر جمہوریہ ہند کو ارسال کیا گیا۔ میمورنڈم میں میانمار میں جاری ظلم و تشدد کو حکومت اور فوج کی دہشت گردی قرار دیتے ہوئے اس کی شدید الفاظ میں مذمت کی گئی اور آنگ سانگ سوچی کو ان سنگین وارداتوں کے لئے ذمہ دار ٹھہراتے ہوئے ان کانوبل انعام واپس لئے جانے کا بھی مطالبہ کیاگیا ۔ کہاگیا ہے کہ ظلم و تشدد کی کوئی مذہب اجازت نہیں دیتا ہے، یہ مہاتما بدھ کی تعلیمات کے بھی منافی ہے ،جس کے لئے وہاں کی سرکاری ذمہ دار ہے ،فوری طورپر اس خونی تشدد پر روک لگانے کے لئے اقدامات کئے جائیں ۔میانمار میں فوج کے ذریعہ جس طرح انسانی جانوں بشمول بچوں، خواتین اور ضعیفوں کا قتل کیاجارہاہے اس نے بربریت کی تمام حدود پار کردی ہیں،جس سے پوری دنیا کے ساتھ ہندوستان کے مسلمان بھی سخت صدمے ہیں ،اسلئے ہندوستان سے مطالبہ کیا جاتاہے وہ اپنی جمہوری روایت اور اقدار کے مطابق انسانیت کی بنیاد پر اس خونی تشدد پر قدغن لگانے کے لئے قدم اٹھائے اور ہندوستان میں میانمار کے جو مہاجرین پناہ لئے ہوئے ہیں انہیں عالمی قانو ن کے مطابق جب تک حالات بہتر نہ ہوں پنا ہ دی جائے اور ان کی جان و مال کی حفاظت کا ذمہ لیاجائے ،میمورنڈم میں مطالبہ کیاگیا ہے کہ برما متاثرین کے لئے بنیادی سہولیات و راحت رسانی کی امداد کی اجازت فراہم کی جائے تاکہ انسانیت کی بنیاد پر ان لوگوںکی مدد کی جاسکے۔پر امن مظاہرے کے دوران بڑی تعداد میں جگہ جگہ پولیس فورس تعینات تھی جبکہ خفیہ محکمہ بھی کافی الرٹ نظر آیا۔ مظاہر علوم وقف سہارنپور کے استاذ مولانا ریاض ندودی کی قیادت میںدیئے گئے میمورنڈم کے دوران لئیق احمد صدیقی، محمد انس عرف فخر الحسن، عارف خاں،رئیس صدیقی،محمدہارون،محمد علیم،پیر نیتا،حافظ خلیل،سفیان احمد، عدنان صدیقی،حیدر رؤف سمیت ہزاروں کی تعداد میںلوگ شامل رہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker