ہندوستان

مولانا حیات اللہ قاسمی کے انتقال پر جمعیۃ علماء مہا راشٹر کی تعزیت

ممبئی ۔ ۱۴؍ جنوری ( پریس ریلیز) جمعیۃ علماء اتر پردیش کے سابق صدر مولانا حیات اللہ قاسمی مہتمم جا معہ نور العلوم بہرائچ کے انتقال پر ملال پرجمعیۃ علماء مہاراشٹر کے صدر مولانا حافظ محمد ندیم صدیقی اور مولانا محمد ذاکر قاسمی جنرل سکریٹری و دیگر عہدیداران نے گہرے رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے حضرت مولانا کے انتقال کوموت العالم موت العالم کے مصداق قرار دیا اور کہا کہ مولانا کی رحلت ملت اسلامیہ کے لئے ایک بڑا سانحہ اور عظیم نقصان ہے انکے کے وصال سے جو خلاء پیدا ہوا ہے اس کا پر ہونا مشکل ہے ۔ اللہ تعا لی حضرت والا کی بال بال مغفرت فر مائے، درجات کو بلند فر مائے اور امت کو اس نقصان کا نعم البدل عطاء فر مائے ۔۱۴؍ جنوری کو بعد نماز ظہر شہر بہرائچ کی جامع مسجد میں ہزاروں سوگواروںکی مو جودگی میں جمعیۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹر ی مولانا سید محمود اسعد مدنی صا حب کی اما مت میں نماز جنازہ ادا کی گئی اور انکے آبائی قبرستان میں تدفین عمل میں آئی۔مولانا حیات اللہ قاسمی ایک عظیم مجا ہد آزادی مولانا کلیم اللہ صاحب کے صاحبزادے تھے۔ وہ مشرقی یوپی کے ایک مشہور ادارہ جامعہ نورالعلوم بہرائچ کے مہتمم اور ملک کی سب سے بڑی تنظیم جمعیۃ علماء ہند کے رکن عاملہ اور پورے صوبہ اتر پردیش کے تقریبا ۱۵؍ سال تک جمعیۃ علماء کے صدر رہے ۔علاوہ ازیں یوپی کی تمام دینی و ملی سر گر میوں میں بڑھ چرھ کر حصہ لیتے رہے ۔وہ کئی مدارس واداروں کے سر پرست تھے،شہر بہرائچ اور علاقے میں اللہ نے بے حد مقبولیت عطاء کی تھی ،ان کا درس و تدریس اساتذہ اور طلباء میں کافی مقبول تھاالغرض مولانا مرحوم گوناں گوں صلاحیتوں کے مالک تھے ۔ اللہ تعالی مولانا مر حوم کی دینی ،ملی فلاحی خدمات کو قبول فر مائے پسماندگان ( تین بیٹے ،چار بیٹیاںاہلیہ) ولواحقین کو صبر جمیل عطاء فر مائے۔مولانا محمد ذاکر قاسمی نے صوبے کے تمام مدارس کے ذمہ داران اور جمعیۃ علماء کے ضلعی و مقامی یو نٹوں کے عہدیداران ،ممبران و اراکین سے اپیل کی ہے کہ وہ مولانا مرحوم کے لئے ایصال ثواب اور دعائے مغفرت کا اہتمام کریں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker