جہان بصیرتنوائے خلق

خواتین کی احتجاجی ریلی ایک اہم ضرورت ہے

مکرمی!
آج خواتین کے جلوس پر شرعی بحث چل رہی ہے، ‘ بندہ کے خیال مطابق موجودہ زمانے کے جمہوری ملکوں میں اپنی بات منوانے کا یہ ایک طریقہ ہے ‘جس میں سر گنے جاتے ہیں ـ ،رہی قرانی آیت’’و قرن فی بیوتکن ‘‘ تواس کے آگے ’’ ولا تبرجّن تبرجّ الجاہلیۃ ‘‘ بھی ہے ۔ـوقتی وہنگامی ضرورت کے لئے عورت کے گھر سے باہر نکلنے پر’’ قرن فی بیوتکن‘‘ کا اطلاق نہیں ہوتا، ‘ گھر میں آگ لگ جائے، ‘ فسادہوجائے یا کوئی اور ایسی بات پیش آجائے جس میں گھر سے نکلنا ضروری ہوجائے تو اس میں عورت کو ’’وقرن فی بیوتکن‘‘ کہہ کر روکا نہیں جاسکتا ـ، اس لئے اپنے حقوق کے حصول اور شریعت کے تحفظ کے لئے اگر عورتوں کو گھر سے باہر آنا پڑرہا ہے تومیرے خیال میں یہ بھی اہم ضرورتوں میں سے ایک اہم ضرورت ہے۔ ـ بے شک اس سے تو اختلاف ہو سکتا ہے کہ طلاق بل اور شریعت میں مداخلت کے خلاف عورتوں کا گھر سے باہر آنا شرعی طور پر ضرورت سمجھا جائے گا یا نہیں جبکہ دشمنان اسلام میڈیا میں چند خریدی ہوئی عورتوں کوپیش کرکےشریعت میں مداخلت کا بہانہ تلاش کر رہے ہیں۔ ـ پوری آیت دیکھنے کے بعد ظاہر ہوجاتا ہے کہ قران مجید عورتوں کوہنگامی ضروریات کے لئے باہر نکلنے سے نہیں روک رہا ہے بلکہ ” تبرُّج جاہلیہ ” (جاہلیت کی طرح خود کونمایاں کرنا اور اترانا)سے روک رہاہے۔ ـ میرے خیال سے اب تک کسی بھی ریلی میں ’’ تبرّج ‘‘ نہیں پایا گیا ہے ـ اور موجودہ ریلیاں وقتی وہنگامی ضرورت کے تحت ہی منعقد کی جارہی تھیں چونکہ پارلیمنٹ کا اجلا س ختم ہورہا ہے اس لئے آج پرسنل لا بورڈ نے ان کے اختتام کا اعلان بھی کردیاہے ـ ۔
درج بالا تحریر احقر کے خیالات کی ترجمانی کرتی ہےتاہم اہل علم کے اختلاف کا بھی خیر مقدم ہے ـ ۔واللہ اعلم بالصواب
محمود دریابادی

Tags

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker