شمع فروزاںمضامین ومقالات

جنسی ہراسانی کا سد باب

(دوسری اورآخری قسط)
شمع فروزاں : مولانا خالد سیف اللہ رحمانی
تیسرا ضروری اور اہم کام یہ ہے کہ ان تمام چیزوں کو روکا جائے، جو بے حیائی پر اُکساتی ہیں، اسلامی نقطۂ نظر سے تو موجودہ دورکی مروجہ تقریباََ تمام ہی فلمیں ناجائز ہیں؛ کیوں کہ بظاہر کوئی فلم پیارو محبت کے مناظر، خواتین کے کردار ،ماردھاڑ اورقتل وخون کی عکس بندی سے خالی نہیں ہوتی ، یہ فلمیں جرم کے لئے تحریک پیدا کرتی ہیں، فلمیں دیکھ کر لوگ زنا بالجبر کے مرتکب ہوتے ہیں، فلمی منظر کی نقل کرتے ہوئے بچے اپنے ساتھیوں کو پھانسی کے پھندے پر چڑھا دیتے ہیں، فلموں سے متأثر ہو کر خود کشی کے واقعات پیش آتے ہیں، یہ ساری باتیں وہ ہیں جو شب وروز اخبار میں آتی رہتی ہیں، جو فلمیں پہلے پردۂ سیمیں پر آتی تھیں، اب سوشل میڈیا کے ذریعہ گھر گھر پہنچ رہی ہیں؛ بلکہ اب اس کے لئے گھر کی وسعت بھی مطلوب نہیں ہے، شرٹ کی ایک جیب کافی ہے، اس وقت سوشل میڈیا کے ذریعہ ایسا ہیجان انگیز مواد سماج کے ایک ایک فرد تک پہونچانے کی کوشش کی جارہی ہے کہ ٹاکز میں بیٹھ کر دیکھی جانے والی فلمیں اس کی گندگی پر سو بار نثار ہو جائیں۔
اس لئے حکومت کو چاہئے کہ فلم کے قوانین کو سخت بنائے؛ تاکہ فحش فلمیں سنسر بورڑ سے پاس نہ ہو سکیں، بالغوں کے لئے بنائی جانے والی خصوصی فلموں پر مکمل پابندی عائد کر دی جائے؛ کیوں کہ جب یہ فلمیں منظر عام پر آتی ہیں تو بظاہر بالغ ونابالغ کی حدیں برقرار نہیں رہ پاتی ہیں، اسی طرح سوشل میڈیا پر عریاں اور فحش فلموں کو مکمل طور پر بلاک کردیا جائے؛ تاکہ لوگوں کی ان مناظر تک رسائی نہ ہو سکے، یہ فحش فلمیں نہ صرف اخلاقی پہلو سے معاشرہ کو نقصان پہنچا رہی ہیں؛ بلکہ صحت کے لئے بھی مضر ہیں، اور طلبہ کی تعلیمی اُمنگوں کو بھی نقصان پہنچا رہی ہیں۔
میں نے یہ بات انسانی نقطۂ نظر سے کہی ہے اگر کوئی ایسا ملک ہو جہاں مسلمانوں کی اکثریت ہو اور وہاں شرعی قوانین نافذ ہوں تو ایسی جگہ کے لئے تو اور بھی سخت معیار اختیار کرنا ہوگا،؛لیکن بہر حال اسلام کی نظر میں حیا کو بنیادی اہمیت حاصل ہے، یہاں تک کہ آپ نے اس کو اعمال کا نہیں ایمان کا ایک شعبہ قرار دیا ہے: الحیاء شعبۃ من الایمان (صحیح البخاری، کتاب الایمان، باب امور الایمان، حدیث نمبر: ۹) حضرت انسؓ سے آپ کا ارشاد منقول ہے کہ جس چیز میں بھی بے حیائی ہو وہ اسے خراب کر دیتی ہے، اور جس چیز میں بھی حیاء ہو، وہ اُ سے خوبصورت بنا دیتی ہے:’’ ماکان الفحش في شئی قط الا شانہ ولا کان الحیاء في شئی قط الا زانہ‘‘ (بیہقی فی شعب الایمان، حدیث نمبر: ۷۳۲۷) جب تک حکومت ایسی فلموں پر پابندی عائد نہیں کرتی، جرائم کو روکنے کی ہزار تدبیریں کرلی جائیں،کامیابی حاصل نہیں ہو سکتی۔
چوتھی ضروری تدبیر یہ ہے کہ سماج کی اخلاقی تربیت پر توجہ دی جائے، بدقسمتی سے سیکولرزم کے نام پر تعلیمی اداروں میںا خلاقی تعلیم کی کوئی گنجائش نہیں رکھی گئی ہے، انسان کے مزاج کو صحیح راستہ پر قائم رکھنے میں تعلیم کا بڑا حصہ ہے، تعلیم کے ذریعہ انسان کی سوچ بنتی ہے، فکر صحیح ہوتی ہے، اور مثبت تبدیلی آتی ہے؛ اس لئے ضرورت اس بات کی ہے کہ عصری تعلیمی اداروں میں ابتداء سے لے کر دسویں جماعت تک اخلاقی تعلیم کو لازمی جزء بنایا جائے، اور اس میں کامیابی کو امتحان میں کامیابی کے لئے ضروری تسلیم کیا جائے، اخلاقیات کی تعلیم او ر اخلاقی تربیت سے محرومی کا نتیجہ ہے کہ ہمارا ملک ایک طرف تعلیم میں آگے بڑھ رہا ہے، انفارمیشن ٹکنالوجی میں پوری دنیا کو ہم افرادی وسائل مہیا کرتے ہیں، ہمارے تیار کئے ہوئے ہنر مند فنی مہارت کی وجہ سے پوری دنیا میں بہترین مزدور مانے جاتے ہیں؛ لیکن دوسری طرف جرائم کی کثرت کے اعتبار سے ہمارا ملک پوری دنیا میں بدنام ہے، اور ہمارا شمار ایسے ملکوں میں ہے جہاں سب سے زیادہ جرائم پیش آتے ہیں،یہاں تک کہ اس شہرت کی وجہ سے ہمارے ملک میں بمقابلہ دوسرے ملکوں کے سیاح کم آتے ہیں؛ حالاں کہ ہمارے یہاں تاریخی مآثر بڑی مقدار میں ہیں اور خوبصورت فطری مناظر کی بھی کمی نہیں ہے۔
اسی لئے شریعت میں بچوں کی تربیت کو خصوصی اہمیت دی گئی ہے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: کوئی باپ اپنے بیٹے کو بہتر تربیت سے بڑھ کر کوئی عطیہ نہیں دیتا ’’ مانحل والد ولداََ من نحل أفضل من أدب حسن‘‘ (ترمذی، حدیث نمبر:۱۹۵۲) اسی طرح ایک اور روایت میں ہے کہ کوئی شخص اپنے بیٹے کی تربیت کرے ،یہ ایک صاع یعنی تقریباََ پونے چار کلو گیہوںصدقہ کرنے سے بڑھ کر ہے ’’ لأن یؤدب الرجل ولدہ خیر من أن یتصدق بصاع‘‘ (ترمذی، حدیث نمبر: ۱۹۵۱) …………..حدیث میں اگرچہ تربیت کی ذمہ داری والدین پر رکھی گئی ہے؛ لیکن موجودہ تعلیمی نظام کے تحت اسکول اور اساتذہ ہی والدین کا کردار ادا رکرتے ہیں؛ کیوں کہ ۲۴؍ گھنٹوں میں سے زیادہ تروقت اسکول ہی کی فضاء میں گزرتا ہے؛ اس لئے ایک طرف والدین کو گھروں میں بچوں کی تربیت کرنی چاہئے اور ان کے اوقات پر نظر رکھنی چاہئے کہ ان کا وقت کہاں گزر تا ہے، وہ کن لوگوں کی صحبت میں رہتا ہے، اور کن لوگوں کے یہاں اس کی آمدورفت ہے؟ دوسری طرف اسکول میں اساتذہ اخلاقی مضامین پڑھائیں اور اسے بچوں کے ذہن میں بٹھائیں، تو یہ دو طرفہ تربیت ان شاء اللہ بچوں کو بگڑنے سے بچائے رکھے گی۔
اخلاقی تعلیم کے لئے ضروری ہے کہ حکومت یا تعلیمی ادارے ایک ایسا نصاب مرتب کریں، جس میں اخلاقی فضائل کی ترغیب دی جائے، اخلاقی برائیوں کی قباحتیں سمجھائی جائیں، ہر مضمون کے لئے مذہبی کتابوں اور پیشواؤں کے فرمودات نقل کئے جائیں، اور موضوع کی مناسبت سے مؤثر واقعات ذکر کئے جائیں، اس طرح ہم ایسی نسل تیار کرنے میں کامیاب ہو سکیں گے، جس میں شروم حیاء ہو، بڑوں کی بات ماننے کا جذبہ ہو اور وہ اپنی رضامندی سے گناہوں سے دور رہنے والے ہوں۔
پانچویں ضروری تدبیر یہ ہے کہ ایسے مجرمین کے لئے جسمانی سزا رکھی جائے، اور یہ سزا علی الاعلان دی جائے، اسلام نے غیر شادی شدہ مردو عورت کے لئے زنا کی سزا ۱۰۰؍کوڑے رکھی ہے، (النور:۲) اور شادی شدہ مردوعورت کے لئے سنگ سار کرنے کی سزا مقرر کی ہے، جس کا ذکر صحیح ومعتبر احادیث میں آیا ہے، (صحیح البخاری، باب رجم المحصن، حدیث نمبر: ۶۸۱۴) نیز یہ دونوں سزائیں علی الاعلان دیے جانے کا حکم ہے، خود رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانے میں بھی یہ سزائیں عام مجمع میں نافذ کی گئی ہیں، (صحیح مسلم، کتاب الحدود، حدیث نمبر: ۱۶۹۵-السنن الکبریٰ للبیہقی، حدیث نمبر: ۱۶۹۶۳)؛ کیوں کہ جو سزا بر سرعام دی جاتی ہے، وہ لوگوں کے لئے تازیانۂ عبرت بنتی ہے، اور جو سزا تنہائی میں دی جاتی ہے، اور لوگ اسے چشم عبرت سے نہیں دیکھ پاتے تو اس کا اثر کم ہوتا ہے، اسی طرح جرائم کو روکنے میں جسمانی سزائیں زیادہ مؤثر ہوتی ہیں، جن ملکوں میں شرعی قوانین نافذ کئے گئے، وہاں عملی طور پر یہ بات دیکھی گئی کہ جسمانی سزا کے جاری ہوتے ہی جرائم کی شرح بہت ہی کم ہو گئی۔
موجودہ حالات میں زنا بالجبر کے مجرم کے لئے سخت سزا کا مطالبہ کیا جارہا ہے؛ لیکن یہ بات پیش نظر رکھنی چاہئے کہ اگر جرم کے محرکات کو سماج میں باقی رکھا جائے، ان اسباب کو روکنے کی کوشش نہ کی جائے، جو جرم پر اُکساتے ہیں اور سزائیں سخت دی جائیں، تو یہ انصاف ہے، نہیں ظلم ہے؛ اس لئے پہلے جرم پر اُکسانے والے عوامل کا راستہ بند کرنا چاہئے، پھر سخت سے سخت سزا مقرر کرنی چاہئے، جس معاشرہ میں گناہ کی طرف دعوت دینے والی فلمیں حکومت کی اجازت سے دکھائی جاتی ہوں، قدم قدم پر گناہ پر اُکسانے والے اشتہارات آویزاں ہوں، مارکیٹ میں فحش لٹریچر کا سیلاب ہو اور ہر طرف نیم عریانیت کا بازار گرم ہو، وہاں جرم کے مرتکب کو پھانسی کی سزا دینا شاید جرم سے متأثر ہونے والی عورت کے لئے تو انصاف ہو؛مگرجرم کا ارتکاب کرنے والے مرد کے ساتھ یہ ایک درجہ ناانصافی ہے۔
چٹھی ضروری تدبیر نشہ بندی کی ہدایات کو عملی جامہ پہنانا ہے، نشہ صرف ایک برائی نہیں ہے؛ بلکہ بہت سی برائیوں کی جڑ بھی ہے؛ اسی لئے پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کو ام الخبائث کا نام دیا ہے، (سنن نسائی، کتاب الاشربہ، حدیث نمبر: ۵۶۶۷) عصمت وعفت پر حملہ کا مسئلہ نشہ سے جڑا ہوا ہے؛ کیوں کہ نشہ میں مبتلا لوگ بے قابو ہو جاتے ہیں اور ماحول کی پرواہ کئے بغیر مجرمانہ حرکت کے مرتکب ہوتے ہیں، یہاں تک کہ ہوائی جہاز میں ائیرہوسٹس اور خود خاتون پیسنجر پر دست درازی کے واقعات پیش آتے رہتے ہیں؛ بلکہ ایسا بھی ہوتا ہے کہ جس کے ساتھ زیادتی کی جاتی ہے، اس کو نشہ پلا کر بے شعور اور بے بس بنا دیا جاتا ہے، اور پھر اس کے ساتھ نہ صرف جرم کا ارتکاب کیا جاتا ہے؛ بلکہ اس کی عکس بندی بھی کی جاتی ہے، پہلے اس طرح کی خبریں شاذونادر پڑھنے میں آتی تھیں اور حیرت واستعجاب کی آنکھوں پڑھی جاتی تھیں؛ لیکن اب آئے دن اخبارات میں اس طرح کی باتیں آتیں رہتی ہیں۔
کالجوں اور یونیورسٹیوں میں پڑھنے کی جو عمر ہوتی ہیں، یہ کچی اور ناپختہ عمر ہوتی ہیں، اب بد قسمتی سے تعلیمی اداروں میں منشیات کی رسائی بہت بڑھ گئی ہے، اور اس کی وجہ سے تعلیمی مراکز میں جرائم کی شرح بھی بڑھتی جا رہی ہے، تعلیم کی وجہ سے جرائم کو کم ہونا چاہئے؛ لیکن نتیجہ اس کے برعکس سامنے آرہا ہے، دستور ہند میں جو رہنما اصول دیے گئے ہیں، ان میں ایک نشہ بندی بھی ہے؛ لیکن اس وقت صرف دو ہی ریاستیں ہیں، جن میں عملی طور پر اس کو نافذ کیا گیا ہے، ایک: بہار، دوسرے: گجرات، شراب کی خریدو فروخت کی اجازت میں تین گروہوں کامادی فائدہ ہے، ایک شراب بیچنے والوں کا، جن کو اس سے کثیر آمدنی حاصل ہوتی ہے، دوسرے: حکومت کا جو شراب فروشوں سے بھاری ٹیکس حاصل کرتی ہے، تیسرے: ان لوگوں کا جن کے لئے شراب ایک لت بن چکی ہے؛ لیکن نوے فیصد سے زیادہ عوام کا مفاد شراب بندی میں ہے، شراب بندی کے ذریعہ عورتوں پر مظالم کو روکا جا سکتا ہے، سماج کو فضول خرچی سے بچایا جا سکتا ہے، شراب بیچنے والوں کو ان حقوق کی ادائیگی پر آمادہ کیا جا سکتا ہے، جو خاندان کے ایک فرد کی حیثیت سے ان پر لازم ہے، اور قتل وزنا جیسے جرائم کو روکنے میں بھی اس سے بڑی مدد مل سکتی ہے، اسلامی نقطۂ نظر سے تو شراب نوشی بہت ہی بڑا جرم ہے، اور اس کے لئے بعض فقہاء کے یہاں ۴۰؍ اور بعض کے یہاں ۸۰؍ کوڑے کی سزا مقرر ہے؛ لیکن خالص انسانی نقطۂ نظر سے بھی یہ مسئلہ نہایت قابل توجہ ہے، اور جائزہ لیا جائے تو بہت سے جرائم کے پیچھے اس کی کارفرمائی نظر آتی ہے۔
ساتویں قابل توجہ بات یہ ہے کہ حکومت نے نکاح کی جو کم ترین عمر مقرر کی ہے، یعنی لڑکیوں کے لئے اٹھارہ سال اور لڑکوں کے لئے اکیس سال، اس پر غور مکررکرنا چاہئے، لڑکے اور لڑکیاں عموماََ پندرہ سال کی عمر میں بالغ ہو جاتے ہیں، اسلام نے اگرچہ نابالغی میں نکاح کی ترغیب نہیں دی ہے؛ لیکن اس کی گنجائش رکھی ہے؛ لیکن بالغ ہونے کے بعد تو نکاح میں عجلت کا حکم دیا گیا ہے، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے نوجوانوں کو خطاب کرتے ہوئے فرمایاکہ تم میں سے جس کے اندر بیوی کی ضروریات پوری کرنے کی صلاحیت پیدا ہو جائے تو اسے نکاح کر لینا چاہئے؛ کیوں کہ نکاح انسان کو بدنگاہی اور زنا سے بچاتا ہے: ’’ فانہ أغض للبصر وأحسن للفرج ‘‘ (صحیح البخاری، کتاب النکاح، حدیث نمبر: ۵۰۶۶)
یہ تو شریعت اسلامی کا نقطۂ نظرہے، جس کا ہم مسلمانوں کے لئے مطالبہ کرتے ہیں، تمام قوموں کے لئے نہیں؛ لیکن انسانی بھلائی اور جرائم پر قابو پانے کے نقطۂ نظر سے حکومت کو چاہئے کہ بلوغ کے بعد نکاح میں رکاوٹ پیدا نہ کرے، یہ معاشرہ کے مفاد میں ہے، اس سے نوجوانوں کے بھٹکنے اور بہکنے کا امکان کافی کم ہو جاتا ہے، اگر جرائم کے اعدادو شمار دیکھے جائیں تو ۱۵؍سال سے ۲۰؍سال کی عمر کے لڑکے لڑکیوں کی اچھی خاصی تعداد اس کی مرتکب ہوتی ہے، پھر یہ بات کس قدر عجیب ہے کہ لڑکے اور لڑکیوں کے جائز تعلق کے لئے سولہ سال کی عمر کو معیار مانا گیا ہے، گویا اگر باہمی رضامندی سے ۱۶؍سال کے لڑکے اور لڑکی بغیر نکاح کے تعلق قائم کریںتو قانون اس میں رکاوٹ نہیں بنتا؛ لیکن اگر اسی عمر میں وہ آپس میں نکاح کے ذریعہ مربوط ہونا چاہیں تو قانون اس سے منع کرتا ہے؛ اگرچہ کہ اب جو تعلیمی رجحان معاشرہ میں پیدا ہو ا ہے، اس کے تحت کم عمری میں نکاح کے واقعات خود ہی کم ہو گئے ہیں؛ لیکن اخلاقی نقطۂ نظر سے اگر والدین یا خود عاقدین نکاح کی ضرورت محسوس کریں اور ان کے لئے یہ راستہ کھول دیا جائے تو یقیناََ یہ بہت ہی بہتر عمل ہوگا۔
شریعت اسلامی صرف مسلمانوں کے لئے نہیں ہے، وہ پوری انسانیت کو فلاح وبہبودی کا راستہ دکھاتی ہے؛ لیکن چوں کہ ہم ہندوستان کے شہری ہیں، ہم نے یہاں کے دستور کو قبول کیا ہے، اور یہ بات تسلیم کی ہے کہ نجی زندگی میں ہر شہری کو اپنے اپنے مذہب پر عمل کرنے کی آزادی ہے، اور دوسرے معاملات میں حکومت کے بنائے ہوئے قوانین پر سب کو قائم رہنا ہے، جن میں جرائم اور ان کی سزائیں بھی شامل ہیں؛ اس لئے ہم یہ تو نہیں کہہ سکتے کہ زندگی کے تمام شعبوں میں قانون شریعت کو نافذ کیا جائے؛ لیکن ملک کی بہی خواہی اور اس سے محبت کے جذبہ سے یہ بات عرض ہے کہ جرم کو روکنے کے لئے سخت سزائیں کافی نہیں ہیں، یہ بھی ضروری ہے کہ جرائم پر اُکسانے والے محرکات کا سد باب کیا جائے، اور اس سلسلہ میں اسلام کی معقول، فطرت سے ہم آہنگ اور انسانی ضرورتوں اورمصلحتوں کی رعایت سے بھر پور تعلیمات سے روشنی حاصل کی جائے، اور گاندھی جی کی اس بات کو سامنے رکھا جائے کہ آزادی حاصل ہونے کے بعد ملک کو ابو بکر وعمرؓ کے طرز حکمرانی کو اختیار کرنا چاہئے۔
(بصیرت فیچرس)
٭ ٭ ٭

Tags
Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker