مولانا طاہر قاسمی سینکڑوں نم آنکھوں کے ساتھ سپرد خاک

مولانا طاہر قاسمی سینکڑوں نم آنکھوں کے ساتھ سپرد خاک

      نماز جنازہ میں قاری صہیب سمیت موقر دانشوروں کی شرکت  ۔
   جالے۔ 13/ستمبر ( پریس ریلیز )
     مقامی بلاک کے دوگھرا گاوں باشندہ اور مدرسہ اسلامیہ شاہ پور بگھونی ضلع سمستی پور کے سابق پرنسپل مولانا طاہر حسین قاسمی کو آج سینکڑوں افراد نے نم آنکھوں کے ساتھ ان کے آبائی وطن کی قبرگاہ میں سپرد خاک کردیا ان کی نماز جنازہ ہائی اسکول دوگھرا کے احاطہ میں مولانا طاہر قاسمی کے شاگرد مولانا قربان قاسمی نے ادا کرائی جس میں سینکڑوں افراد شریک ہوئے جن میں مختلف سیاسی ،سماجی اور ملی رہنماوں کے علاوہ مدرسہ اسلامیہ شاہ پور بگھونی کے ذمہ داران،اساتذہ اور طلبہ سمیت سینکڑوں افراد کی خصوصی شرکت
رہی اس موقع پر نماز جنازہ میں شرکت کے لئے تشریف لانے والے یو وا راجد کے ریاستی صدر قاری محمد صہیب نے نماز جنازہ سے قبل مکھیا نور عالم سابق مکھیا دوگھرا ،کانگریسی لیڈر عامر اقبال جال،شیخ اختر حسین جالے، محمد ارشد مرغوب پنچایت سمیتی بھوانی پور ،سہارا نمائندہ محند رفیع ساگر ،مفتی محمد عامر مظہری ناظم تعلیمات دارالعلوم سبیل الفلاح جالے، محمد ریاض راجد اسٹوڈینٹ یونین جالے کے نائب صدر، محمد نوشاد،مہیش چودھری ضلع پارشد،محمد کلام جالے، مرزا نثار بیگ مرزا پور اور پیام انسانیت ٹرسٹ کے صدر واسلامک مشن اسکول جالے کے ڈائریکٹر مولانا محمد ارشد فیضی قاسمی کے ہمراہ موصوف کے گھر پہنچ کر ان کی اولاد اور اہل خانہ سے ملاقات کے دوران ان سے اظہار تعزیت کی اور اس موقع پر مولانا طاہر قاسمی سے جڑی اپنی پرانی یادوں کو دہراتے ہوئے کہا کہ مولانا اپنے طلبہ سے بے پناہ محبت کرنے والے ایک ایسے استاد تھے جن کی زندگی کے ہر شعبے سے خلوص ومحبت اور اعلی اخلاق کا عکس جھلکتا تھا اور بس یہی نہیں بلکہ وہ زہد وتقوی اور علم وعمل کا مجسم نمونہ تھے جسے دیکھ کر نئی نسل کو حوصلہ ملتا تھا انہوں نے کہا کہ میں نے انہیں ہمیشہ اپنے استاد ومربی کی حیثیت سے دیکھا اور ان کا احترام کیا ہے اس لئے ان کے چلے جانے کا غم نہ صرف مجھے برسوں سوگوار رکھے گا بلکہ ان کی یادیں مجھے ہمیشہ تڑپاتی رہیں گی انہوں نے کہا کہ مولانا کی رحلت صرف ان کے آبائی وطن کے لئے ہی نہیں بلکہ پورے علاقہ کے لئے ناقابل تلافی خسارہ ہے جس کی بھرپائی کہیں برسوں میں جاکر ممکن ہو سکے گی تاہم مجھے یقین ہے کہ ان کے بتائے ہوئے راستے نئی نسل کو آگے بڑھنے اور بڑھتے چلے جانے کا حوصلہ دیتے رہیں گے قاری محمد صہیب نے کہا کہ انہوں نے مدرسہ اسلامیہ شاہ پور بگھونی میں ایک طویل عرصے تک جس خود اعتمادی کے ساتھ نئی نسل کی علمی ضرورتوں کی تکمیل اور ان کی اخلاقی تربیت میں اپنے آپ کو مشغول رکھا اور جس طرح پاکیزہ وبے لوث زندگی گزاری وہ ان کی زندگی کا ایسا سنہرا باب ہے جسے فراموش نہیں کیا جا سکتا انہوں نے کہا کہ میں ذاتی طور پر موصوف کے چلے جانے کے غم کو اپنے سینے میں محسوس کرنے کے ساتھ امید کرتا ہوں کہ ان کی علمی خدمات ان کی ترقی درجات کا سبب بنیں گی اور ان سے آنے والی نسلوں کو زندگی کی قابل رشک سمت ملے گی انہوں نے مولانا طاہر قاسمی کے تمام لڑکوں سے ملاقات کرتے ہوئے انہیں صبر سے کام لینے کی تلقین کی اور کہا کہ غم کی اس گھڑی میں میں آپ کے ساتھ ہوں نماز جنازہ کے بعد وہ نور عالم سابق مکھیا دوگھرا کے یہاں تشریف لائے اور دوپہر کاکھانا تناول کرنے کے بعد جالے کے لئے روانہ ہو گئے وہاں انہوں نے کانگریسی لیڈر عامر اقبال سے ان کی والدہ کے انتقال پر تعزیت کی اس دوران انہوں نے وہاں موجود عوام وخواص سے کہا کہ موجودہ سیاسی منظر نامے پر آپ کو گہری نظر رکھنی ہوگی اور آنے والے وقت میں ایسے فیصلے کا خاموش عہد کرنا ہوگا جو بہار کے سیاسی مستقبل کو تابناک بنا سکے ورنہ آپ کی معمولی سی بھول منفی نتیجے کو جنم دے سکتی ہے انہوں نے اس موقع پر آسمان چھوتی مہنگائی ،بدعنوانی ،چور بازاری، رشوت خوری، خواتین پر ہو رہے ظلم وتشدد کے لئے مرکزی حکومت کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ آج ملک کی جو تصویر ہے اس سے عالمی سطح پر ہندوستان کی شبیہ خراب ہوئی ہے انہوں نے کہا کہ نئی نسل میں سیاسی شعور پیدا کرنے اور این ڈی اے سرکار کی ناکامیوں سے واقف کرانے کے لئے منظم منصوبہ بندی کرنی ہوگی تاکہ سماج میں مضبوط سیاسی صف بندی کے امکانات روشن ہو سکیں.