جہان بصیرتنوائے خلق

بہار ریاستی حج کمیٹی کے سی ای او کی غلط اور متعصبانہ پالیسیوں کی وجہ سے بہار کے عازمیں حج کی دن بدن کم ہوتی تعداد

حکومت کو جلد ازجلد ایکشن لے کر کسی او ر قابل افسر کی بحالی کرنی چاہئے
مکرمی!
ریاست بہارسے عازمین حج کی دن بدن کم ہوتی تعداد قابل تشویش ہے ، اس سال بھی بہار سے حاجیوں کی تعداد کافی کم رہی ، بہار سے ساڑھے دس ہزار کا کوٹا ہے ، مگر آدھے سے زیادہ جگہیں خالی رہ گئیں ، کئی سالوں سے تعداد میں مسلسل کمی دیکھی جا رہی ہے ، دیگر عوامل کے ساتھ ساتھ حج کمیٹی آف بہار کے سی ای او کی غلط اور متعصبانہ پالیسیاں بھی اس کی ذمہ دار ہیں ۔ کئی سالوں سے وہ سی ای او کے عہدے پر ہیں ، لیکن اس کے با وجود ان کی جانب سے عازمین حج کی تعداد میں اضافہ کے لیے کوئی قابل ذکر پیش رفت دکھائی نہیں دیتی ہے ، ترغیب حج کے پروگرام بھی بس رسمی ہو کر رہ گئے ہیں ۔ حج کمیٹی آف بہار کے سی ای او بس ایک خاص مسلک کے ترجمان زیادہ نظر آتے ہیں ۔ اور حج جیسے مقدس اور اہم فریضہ کو بھی انہوں نے ایک خاص مسلک کی تشہیر کا ذریعہ بنا لیا ہے ، جس کی وجہ سے ترغیب حج کے لیے کی جانے والی کوششوں کا کوئی فائدہ نظر نہیں آرہا ہے ۔ یہاں تک کے حج کے ایام میں جو کتابچے اور ہدایات و غیرہ حج بھون میں عازمین حج کے درمیان تقسیم کیے جاتے ہیں وہ بھی صرف ایک مسلک کی ترجمانی کرنے والے ہوتے ہیں ، جب کہ حقیقت یہ ہے کہ دوسرے مسالک کو ماننے والے خاص طور پر حنفی مسلک کی تقلید کرنے والے عازمین کی ایک بڑی تعداد ہوتی ہے ، لیکن حج کے بہت سے اختلافی مسائل میں انہیں صحیح رہنمائی نہیں مل پاتی ہے ، جس کی وجہ سے عازمین حج میں بھی بے چینی کا ماحول پیدا ہو تا ہے ۔اس کے علاوہ عازمین حج کو سہولیات فراہم کرنے میں بھی سی ای او صاحب ناکام نظر آتے ہیں اور ہرسال سیکڑوں حجاج شکایت کرتے نظر آتے ہیں ،اور شکایتوں کی فہرست سال در سال اور طویل ہوتی جا رہی ہے ۔ عام طور پر سفر حج کی چھوٹی موٹی صعوبتوں اور پریشانیوں کو عازمین خوش دلی سے برداشت کر لیتے ہیں اور شکوہ زبان پر نہیں لاتے ،ورنہ یہ فہرست کہیں اور زیادہ طویل ہوتی ۔لیکن ان پریشانیوں کی طرف دھیان نہیں دیا جا تا ہے ۔میڈیا والوں اور سماجی خدمت گاروں کے بار بار توجہ دلانے کے باوجود سی ای او صاحب کے کان پر جوں نہیں رینگتی ۔ اس کے علاوہ عازمین حج کے ساتھ، ان کے متعلقین اور رشتہ داروں یا حج کمیٹی سے رابطہ کرنے والے سماجی خدمت گاروں کے ساتھ جس طرح کا جارحانہ اور متعصبانہ رویہ سی ای او صاحب کی طرف سے روا رکھا جا تا ہے ، اس کی مثال ماضی میں کتنی بار مل چکی ہے ، کتنی مرتبہ ان کے رویہ کو لے کر حج بھون میں ہنگامہ ہو چکا ہے ، یہاں تک کے ان کو حکومت کی جانب سے تنبیہ بھی کی جا چکی ہے ، اور ان کے رویہ کو لے کر ان کے ماتحت کام کرنے والے لوگ بھی نالاں رہتے ہیں ، گرچہ ڈر سے کوئی حرف شکایت زبان پر نہیں لاتا ۔ کئی سابق ملازمین بہت ہی دردمندانہ انداز میں اپنے اوپر ہوئے ظلم کی داستان سناتے ہیں ۔ اگر یہی حال رہا تو بہار سے عازمین حج کی تعداد کم سے کم ہوتی چلی جائے گی ۔اس لیے حکومت کو چاہئے کہ وہ موجودہ سی ای او کے خلاف ایکشن لے اور ان کا ٹرانسفر کسی اور شعبہ میں کر کے حج کمیٹی آف بہار کی ذمہ داری کسی دوسرے قابل افسر کو دی جائے ، جس سنجیدہ ، عازمین حج کے حق میں مفید، بہتر رویہ کا حامل اور مسلکی تعصب سے پاک ہو ، تاکہ ریاست بہار کے عازمین حج کو سہولت ہو اور عازمین کی تعداد میں پھر سے اضافہ ہو سکے ۔ان خیالات کا اظہار معروف سماجی کارکن جناب حسن عاقل صاحب نے کیا ۔انہوں نے کہا کہ موجودہ سی ای او صاحب کے آنے سے پہلے ہر سال حاجیوں کی تعداد میں اضافہ ہو رہا تھا ، لیکن ادھر دو تین برسوں سے مسلسل حاجیوں کی تعداد میں کمی ہو رہی ہے ۔جوسماجی کارکنان محض اللہ کی رضا کے لیے اور ثواب حاصل کرنے کے لیے اپنے اپنے علاقوں میں عازمین حج کی مدد کرتے ہیں ،اور ان کے پاسپورٹ فارم بھرنے سے لے کر حج فارم پر کرنے اور ان کو جمع کرنے تک کا کام کرتے ہیں تاکہ دیہاتوں کے بے پڑھے لکھے یا کم پڑھے لکھے عازمین حج بھی آسانی کے ساتھ حج کی سعادت حاصل کر سکیں ، ان سماجی کارکنان کو بھی حج کمیٹی آف بہار کے موجود ہ سی ای او شک کی نظروں سے دیکھتے ہیں ، یہاںتک کہ کتنی بار ان کی جھڑپ بھی ایسے لوگوں سے ہو چکی ہے ،ان لوگوں کے ساتھ دشنام طراز ی،ان کو شک کی نگاہ سے دیکھنے ، ان کو ایجنٹ اور دلال قرار دینے سے لے کر ہاتھا پائی تک کے کئی واقعات ماضی میں پیش آچکے ہیں ۔ اس لیے ایسے حالات میں ہم سرکار سے مطالبہ کرتے ہیں کہ ایسا افسر بہار جیسی عظیم ریاست کے حج کمیٹی جیسے اہم ادارہ کی ذمہ داری اٹھانے کے قابل نہیں ہے ، اس کو کسی اور شعبہ میں بھیجا جائے اور یہاں کسی دوسرے قابل افسر کی تقرری کی جائے ۔
مظاہرانور

Tags

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker