پورا بنگلہ دیش سعد گروپ کے مظالم کے خلاف سراپا احتجاج، مظاہرین کا حکومت سے ملزمین کو سخت سزا دینے کا مطالبہ، کل بھی مظاہرہ جاری رکھنے کا اعلان

پورا بنگلہ دیش سعد گروپ کے مظالم کے خلاف سراپا احتجاج،  مظاہرین کا حکومت سے ملزمین کو سخت سزا دینے کا مطالبہ، کل بھی مظاہرہ جاری رکھنے کا اعلان

ڈھاکہ- ۲/دسمبر: (ڈھاکہ سے اشرف عالم قاسمی ندوی کی گراونڈ رپورٹ/ بصیرت نیوز سروس ) گزشتہ کل تبلیغی جماعت کے دو دھڑوں میں ہوئے خونریز تصادم کے خلاف آج پورے بنگلہ دیش میں مولانا اشرف علی شیخ الحدیث ومہتمم جامعہ مالی باغ بنگلہ دیش کی قیادت میں زبردست احتجاج کیا گیا ، اس احتجاجی مظاہرے میں مشہور مقرر، جامعہ عربیہ رحمانیہ کے شیخ الحدیث وصدر تحریک مجلس الشباب بنغلہ دیش مولانا مامون الحق نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ حملہ کرنے والے شرپسندوں کے خلاف جلد ایکشن لیا جائے اور انہیں کیفر کردار تک پہنچایا جائے-آج بنگلہ دیش کے دارالحکومت ڈھاکہ شہر کے مختلف علاقوں میں طرح طرح کے نعروں سے مظاہرین نے شہر کی فضا کو گرم رکھا اور اپنا سخت احتجاج درج کرایا، امارت گروپ کی شرپسندی اور بہیمانہ ظلم کے خلاف پورا بنگلہ دیش سراپا احتجاج نظر آیا، طلبہ و عوام مشتعل ہیں اور انہوں نے جاں بحق ہونے والوں کے خون کا حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ بدلہ لے، مظاہرین نے کل بھی پورے بنگلہ دیش میں احتجاج کرنے کا اعلان کیا ہے جس کی وجہ سے نظام زندگی کے مفلوج ہونے کا خطرہ لاحق ہوگیا ہے.
احتجاج کی ابتداء بنگلہ دیش کی قومی مسجد بیت المکرم سے ہوئی- واضح رہے کہ گزشتہ کل ٹونگی میں امارتیوں کے حملے میں تقریبا ایک درجن جاں بحق اور سینکڑوں علماء و طلباء شدید زخمی ہوگئے تھے، آج جاں بحق ہونے والوں کی نماز جنازہ ادا کردی گئی ہے اور زخمیوں کا علاج جاری ہے کچھ زخمیوں کی حالت انتہائی نازک ہے علمائے بنگلہ دیش نے پوری دنیا کے مسلمانوں سے اپیل کی ہے کہ وہ اس کشیدگی کے خاتمے کیلیے دعا کریں اور تبلیغی جماعت میں اتحاد و امن کی کوششوں کیلیے پہل کریں.

علماء کرام نے حکومت کے سامنے جو چھ مطالبات رکھے ہیں وہ یہ ہیں
1 حملہ کے اصل مجرم واصف الاسلام، شہاب الدین اور نسیم سمیت تمام مجرموں کو 24 گھنٹے کے اندر اندر حراست میں لا کر سزا دی جائے ۔
2، تمام زخمیوں کا نقصان تلافی کرنے کے ساتھ ساتھ اعلیٰ علاج کا بندوبست کیا جائے ۔
3, ٹونگی اجتماع کا میدان اب تک جس طرح تھا اسی طرح شوریٰ والوں کو سپرد کیا جائے ۔
4, جلد از جلد کاکرائیل مرکز کو واصف اور نسیم جیسے مجرموں سے خالی کرایا جائے
5،پورے ملک میں علماء طلبہ اور اہل شوریٰ حضرات کے لیے پرامن ماحول بنایا جائے تاکہ ان پر مزید کوئی پریشانی نہ آنے پائے
6. ٹونگی میدان میں طے شدہ تاریخ میں ہی عالمی اجتماع اٹھارہ، انیس، بیس جنوری 2019 میں منعقد کرنے کے لیے تمام کارروائی مکمل کی جائے
پریس کانفرنس میں شارکین حضرات میں شیخ الحدیث نور حسین قاسمی علامہ اشرف علی مولانا زبیراحمد (ممبر عالمی شوریٰ) مولانا مامون الحق وغیرہ شریک رہے