ہندوستان

فتنہ شکیلیت بنگلور تک جا پہنچا

آر پورم۔۶؍دسمبر:  (مفتی محمد زکریا القاسمی)مدینہ مسجد کے آر پورم میں مقیم نوجوان تنویر کو چند ماہ سے ایم پی گوالیار کا رہنے والا عارف نام کاشخص(جو کہ شکیل بن حنیف کا پرچار کرتا پھر رہا ہے) جال میں پھنسانے کے لئے خفیہ محنت اور بات چیت کیا کرتا تھااور تنویر جو کہ مقامی ہے اسکے دام فریب میں آگیا ہے اسکا علم یہاں کے لوگوںکو نہیں ہوا عارف تنویر کو ساتھ لیکر خفیہ طریقے سے سادہ لوح نوجوانوں کو شکیلت کی دعوت دیتا رہابروزِ ہفتہ بلال مسجد بٹر ہلی کے قریب یہ دونوں مغرب سے قبل دعوت دیتے ہوئے پکڑے گئے ایک ساتھی سے جب انھوں نے بات کی کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام آچکے ہیں تو وہ فوراًوہاں کے ذمہ داروں کو اطلاع دی الحمدللہ ذمہ داروں نے ہوشمندی کا مظاہرہ کیا۔ان دونوں کو ایک کمرے میں بند کردیااور پورے کے آر پورم کے ا ئمہ کرام اور ذمہ داران مساجد کو اطلاع کردی،فی الفور تمام علماء کرام اور ذمہ داران مساجد جن میںمناظر اسلام ترجمان علماء دیوبندحضرت مولانا محمد نعیم الدین صاحب قاسمی مدظلہ مہتمم جامعہ الخیرکے آر پورم،حضرت مولانا مفتی محمد زکریا قاسمی صدر مفتی دارلافتاء مجلس تحقیق کے آر پورم،حضرت مولانا مفتی صدام صاحب قاسمی مدظلہ بلال مسجد، حضرت مولانا فرید صاحب قاسمی مدینہ مسجد، حضرت مولاناشاہ عبدالجبار صاحب قاسمی جامع مسجد میڈہلی،حضرت مولانا ضیاء اللہ صاحب قاسمی نورانی مسجد، حضرت مولانا مفتی عبداللہ خان صاحب قاسمی عرفات مسجد،حضرت قاری شیخ عطاء اللہ صاحب عرفات مسجد کے آر پورم جائے وقوع پر پہنچے اور مسلسل چار گھنٹے ان دونوںسے بات ہوئی(۱)وہ کہتے ہیں کہ عیسیٰ علیہ السلام سے ہم ملاقات کر کے آئے ہیںپوچھا گیا کہ کہاں ملاقات کئے توکہتے ہیںکہ بتانے کے لئے منع کیا گیاہے۔ایک بھی سوال کا جواب اُن کے پاس نہیںہے اور ہوتا کیسے؟اسلئے کہ یہ سراسرجھوٹ ہے دھوکہ ہے فریب ہے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے باپ نہیں تھے لیکن شکیل بن حنیف کا باپ ہے حضرت عیسیٰ علیہ السلام دمشق میں اتریں گے اور شکیل بن حنیف بہار کا رہنے والاہے،حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا نام عیسیٰ ہوگاجبکہ اس کا نام شکیل ہے،ان سوالات کا کوئی جواب ان کے پاس نہیں تھا،آخرکار انہیں کلمہ پڑھنے پر مجبور کیاگیا وہ کلمہ پڑھنا نہیں چاہ رہے تھے کیونکہ یہ لوگ لالچ میں پھنس کرتباہی و بربادی اپنا مقدر اور ایمان کے مقابلے گمراہی کو پسند کر چکے ہیں،وجہ لالچ اور پیسہ!پھر انہیںکلمہ پڑھایا گیا اور تاکید کی گئی کہ آئندہکسی کو شکیلت کی دعوت دیتے ہوئے دیکھا گیا تو ہاتھ پاؤںتوڑدیں گے اور عمر بھر کے لئیپورے علاقے کی طرف سے ایک اپلیکیشن تیار کر کے عمر قید کردیا جائے گا۔
لہذاعلماء کرام سے درخواست کی جاتی ہے کہ خاص نگاہ رکھیںکہ آپ کے حلقہ میں شکیلت یا مرزائیت کا پرچارک تو نہیں ہے عوام کی ذمہ داری ہے کہ اس سے بچیں اور ایسے موقع پر انہیںاپنے امام صاحب کے پاس پکڑ کر لائیں، اور شہر کے کونے کونے میں ختم نبوت کے پروگرام منعقد کئے جائیں مساجد میں شکیلت اور مرزائیت کی خدوخال اور اس فتنے سے بچنے کے لئے نوجوانوں کی رہنمائی کی جائے،اللہ تعالیٰ پوری امت مسلمہ کی حفاظت فرمائیں۔آمین۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker