ہندوستان

کٹک اڈیشہ میں وفد امارت شرعیہ کا والہانہ استقبال

پھلواری شریف :22/فروری(بی این ایس)
امارت شرعیہ کا ایک موقر وفد نائب ناظم امارت شرعیہ مولانا مفتی محمد سہراب ندوی قاسمی صاحب کی قیادت میں ۲۰؍فروری سے صوبہ اڈیشہ کے ضلع جگت سنگھ پور،بھومنیشور اورکٹک کے دورہ پر ہے،اس وفد میں مولانا مفتی سعیدالرحمن قاسمی مفتی امارت شرعیہ،مولانا مفتی انور قاسمی قاضی شریعت رانچی،مولانا قمرانیس قاسمی رئیس المبلغین امارت شرعیہ اورحافظ شہاب الدین مبلغ امارت شرعیہ کے علاوہ مقامی علماء کرام اورقاضی شریعت کٹک شامل ہیں،وفد جب ۲۰؍تاریخ کو شہر کٹک پہونچاتو شہر کے علماء وائمہ اور عمائدین نے وفدکا والہانہ استقبال کیا،وفد کے استقبال میں ۱۰؍بجے دن تا ۱؍بجے دفتر امارت شرعیہ کٹک کی وسیع ہال میں شہر اوراطراف کے علماء وائمہ ،خواص اوردانشوران کی طرف سے شاندار استقبالیہ اجلاس منعقد ہوا،جس میں صوبہ اڈیشہ کے مسلمانوں کی دینی ،سماجی اورتعلیمی صورتحال اورامارت شرعیہ کی طرف سے اڈیشہ میں دئے گئے خدمات اوردفتر امارت شرعیہ کٹک کو مزید فعال بنانے اوراس کے بالائی منزل پر ہیلف سنٹر کے قیام کے تعلق سے تبادلۂ خیال ہوا،اورارکان وفد نے وفد کی آمدکے مقاصد کو بیان کرتے ہوئے مختلف اہم موضوعات پر موثر گفتگوکی،رات کا اجلاس مشہورآبادی معصوم پور میں منعقد ہوا،جہاں قرب وجوار کی آبادی سے بڑی تعداد میں لوگ اجلاس میں شریک ہوئے،اس موقع پر قائد وفد مفتی محمد سہراب ندوی صاحب نے حاضرین کو امارت شرعیہ کے موجودہ نظام ،صوبہ اڈیشہ میں اس کی خدمات ومنصوبے ،موجودہ امیر شریعت مفکراسلام حضرت مولانا سید محمد ولی رحمانی صاحب مدظلہ کی سرپرستی میں امارت شرعیہ کے بڑھتے قدم اورہمہ جہت منصوبوں کا تعارف کراتے ہوئے حاضرین سے امارت شرعیہ کے ساتھ ہمیشہ گہری وابستگی رکھنے اورایک امیر شریعت کی ماتحتی میں دینی زندگی گذارنے کا عہد لیا،آپ نے اپنے بیان میں دین کے تحفظ اوردنیا کی ترقی کا کامیاب نسخہ بتاتے ہوئے بنیادی دینی تعلیم کے نظام کو مسجد ،مکتب اورمدرسہ کی سطح پر مضبوط بنانے اورمعیاری تعلیم کے میدان میں اپنے بچوں کو آگے بڑھانے کی دعوت دی اورکہاکہ اگر ان دوچیزوں پر قوم پوری توجہ دے تونہ ہماری نسل دین سے محروم ہوسکتی ہے اورنہ دنیا کی ترقی میں پیچھے ہوسکتی ہے،مفتی محمد سعیدالرحمن قاسمی صاحب نے معاشرتی خرابیوں کو دور کرنے کی تلقین کرتے ہوئے خاص طورپر شادی بیاہ اور طلاق کے معاملہ میں شریعت کی پابندی کی نصیحت کی اورکہاکہ ہماری قوم نے جب نکاح کے آسان کام کو مہنگا بنادیاتو نہ صرف معاشرہ میں بدکاریوں کا گراف بڑھا ہے بلکہ سیکڑوں بیٹیاں ارتداد کا شکار ہورہی ہیں،ضرورت ہے کہ جس طرح نماز روزہ میں شریعت کی پابندی کی جاتی ہے ویسے ہی نکاح اورشادی میں بھی شریعت کا پابند رہا جائے۔قاضی محمد انور قاسمی نے نظام قضاء کی اہمیت اورموجودہ حالات میں اس کی ضرورت کو موثر انداز میں سمجھایااوربتایاکہ دارالقضاء اسلامی تعلیمات کا بنیادی حصہ ہے ،یہ انصاف تک پہونچنے کا آسان راستہ ہے جس میں شریعت کے مطابق فیصلہ بھی ملتاہے اورمتعدد گناہوں سے حفاظت بھی ہوتی ہے۔مولانا قمرانیس قاسمی صاحب نے امارت شرعیہ کا جامع تعارف کراتے ہوئے ہرعمل میں اخلاص کو اپنانے اورہردینی کام میں رفیق بن کر شریک رہنے کی اپیل کی اورامارت شرعیہ کی طرف سے علماء کرام کی آمد کودینی بیداری کے لئے ایک موثر تحریک قراردیا۔۲۱؍فروری کو دن کا اجلاس تیرن میں منعقد ہوا جہاں وسیع پنڈال میں مسلمانوں کی بڑی تعدادنے وفد کے پیغام کو سنا،واضح رہے کہ یہ وفد ۲۷؍فروری تک اس حلقہ کے دورہ پر رہے گا،ہرجگہ علماء وائمہ اورعام مسلمانوں کی طرف سے شاندار استقبال کیا جارہاہے اورحضرت امیر شریعت کے پیغام پر مضبوطی کے ساتھ عمل کرنے کا عہد ہورہاہے،مولانا صبغۃ اللہ قاسمی معاون قاضی دارالقضاء کٹک اورحافظ شہاب الدین مبلغ امارت شرعیہ پوری فکر مندی کے ساتھ وفد کے نظام کو کامیاب بنارہے ہیں۔یہ اطلاع دفتر تنظیم سے مولانا شاہ نواز عالم مظاہری نے دی۔

Tags

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker