مضامین ومقالات

کیا مسلمان مغربی میڈیا کے نشانہ پر ہیں ؟

 

شاہد معین دیوبند

مغربی میڈیا کی ﺍﺳﻼﻡ دشمنی ، مغربی میڈیا کا دوغلاپن ، مغربی میڈیا کا مسلمانوں کے تئیں تعصب چیک کیجئے.

دیکھئے کہ کس طرح ایک ’ ﮈﯾﻠﯽ ﻣﺮﺭ ‘ ﻧﺎﻣﯽ مغربی ﺍﺧﺒﺎﺭ نے ﻧﯿﻮﺯﯼ ﻟﯿﻨﮉ ﮐﯽ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺣﻤﻠﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﮨﺸﺖ ﮔﺮﺩ ﮐﻮ ’ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﻓﺮﺷﺘﮧ‘ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ہے ، اخبار ﻧﮯ 55 سے زائد ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺷﮩﯿﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﮨﺸﺖ ﮔﺮﺩ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﺎ ﮐﮧ ”ﻗﺪﺍﻣﺖ ﭘﺮﺳﺖ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﻭﺭﺵ ﭘﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﯾﮏ ‘ﻣﻌﺼﻮﻡ ﻓﺮﺷﺘﮧﺻﻔﺖ’ لڑکے ﻧﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻟﻮﮒ مار ﮈﺍﻟﮯ .“

اس ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻟﮍﮐﮯ ﻧﮯ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﮨﻢ ﺟﻨﺲ ﭘﺮﺳﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﺮﻭﮦ ﭘﺮ ﻓﺎﺋﺮﻧﮓ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﺳﯽ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺣﻤﻠﮧ ﺁﻭﺭ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺧﺒﺮ ﻟﮕﺎﺋﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ”ﺍﯾﮏ داعش ﮐﮯ مسلم ﺷﺪﺕ ﭘﺴﻨﺪ ﺩﮨﺸﺖ ﮔﺮﺩ ﻧﮯ ﮨﻢ ﺟﻨﺲ ﭘﺮﺳﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﻠﺐ ﻣﯿﮟ 50 ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﺎ ﻗﺘﻞ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ .“

مغربی ﻣﯿﮉﯾﺎ ﻧﮯ ﺍﺳﻼﻡ ﺩﺷﻤﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ کو پس پشت ڈالتے ہوئے ﺍﻣﻦ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﻤﺎﺯﯼ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻗﺎﺗﻞﮐﻮ ‘ﻣﻌﺼﻮﻡ’ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﮮ ﺩﯾﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﯾﮏ ﻏﯿﺮ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﻓﻌﻞﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺎﺭﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﮐﻮ ﺷﺪﺕ ﭘﺴﻨﺪ ﺍﻭﺭ ﺩﮨﺸﺖ ﮔﺮﺩ ﮔﺮﺩﺍﻧﺎ، مغربی ﻣﯿﮉﯾﺎ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺳﮯ ﻣﻨﺎﻓﻘﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﺁﯾﺎ ﮨﮯ، ﺍﺏﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ دہشت گردانہ فعل ﺟﺲ ﭘﺮ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﻧﮯ ﻣﺬﻣﺖ ﮐﯽ ﮨﮯ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﺍﺧﺒﺎﺭ ﻧﮯ ﺗﻌﺼﺐ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﮐﯽ ﺗﺬﻟﯿﻞ ﮐﯽ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻌﺼﺐ ﮐﯽ ﺳﻮﻟﯽ ﭘﺮ ﭼﮍﮬﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ. ﻣﻐﺮﺏ ﺟﻮ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﻟﺒﺮﻝ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻓﺨﺮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺫﮐﺮ ﭘﺮﺁﺝ ﺑﮭﯽ تعصب و اسلام دشمنی ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ،

اس سے صاف معلوم ہوتا کہ یہ صلیبیوں صهیونیوں کی امت مسلمہ کے ساتھ ﺗﮩﺬﯾﺒﻮﮞ ﮐﯽ ﺟﻨﮓ ﮨﮯ ﯾﻌﻨﯽ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﺑﻤﻘﺎﺑﻠﮧ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﺗﮩﺬﯾﺐ ، ﺍﺱ ﺟﻨﮓ ﻣﯿﮟ ﺻﻠﯿﺒﯽ، ﺻﯿﮩﻮﻧﯽ ﺍﻭﺭ دیگر باطل قوتیں سب کے سب ایک پلیٹ فارم پر جمع ﮨﯿﮟ ، جو ﺩﻥ ﺭﺍﺕ اپنے ‘دجالی میڈیا’ کو ہتیار کے طور پر استعمال کرکے اسلام مخالف منفی پروپیگنڈہ کے ذریعہ مسلمانوں پر دنیا تنگ کرنے ، ہر ملک میں مسلمانوں پر دہشت گردی کا لیبل لگا کر انهیں الگ تهلگ کرنے کے مشن پر زور و شور سے لگے ہوئے ﮨﯿﮟ،

اسلامو فوبیا، ﻧﯿﻮ ﻓﺎﺷﺰﻡ، ﺍﻭﺭ ﺭﯾﺲ ﺍﺯﻡ، ﺍﻥ کی ایسی تنظیم ہے جوکہ پوری دنیا میں مسلمانوں کے خلاف سرگرم عمل ہے ،دیگر اقوام کو مسلمانوں کے خلاف برانگیختہ کرنے میں ان کا کوئی ثانی نهیں ،
جب ﭼﺎﺭﻟﯽ ﺍﯾﺒﺪﻭ ﭘﺮ ﺣﻤﻠﮧ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ دن سارے باطل فرقوں کے ﭘﯿﺮﻭﮐﺎﺭ ﺍﯾﮏ ﺟﺴﺪ ﻭﺍﺣﺪ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻓﺮﺍﻧﺲﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ، ﺁﺝ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﭘﺮ ﺣﻤﻠﮧ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺻﺮﻑ ﺑﯿﺎﻧﺎﺕ ﺩﯾﻨﮯ ﭘﺮ ﺍﮐﺘﻔﺎ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ،

لیکن افسوس امت مسلمہ کئی عرصوں سے شهیدوں کی جسد خاکی کو اٹهانے میں مصروف ہے ، دہشت گردی کے الزام سے متهم ہے ، اب ایک ﺟﺴﺪ ﻭﺍﺣﺪ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ایک پلیٹ فارم پر آنے کا وقت آگیا ہے ، ایک مضبوط میڈیا پلیٹ فارم کے ذریعہ ان کے الزام ﮐﺎ جواب دینے کا وقت آگیا ہے، ورﻧﮧ ﻣﺎﺭﯾﮟ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ یا پهر وہن کی بیماری میں مبتلا ہوکر اسی طرح غلامانہ زندگی گزارتے رہو ﮔﮯ.

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker