ہندوستان

جمعیۃ علماء گوونڈی کی طرف سے غرباء میں کٹ کی تقسیم

 

(عبد القادر فہمی کی رپورٹ)

معاشرے میں معاشی توازن برقرار رکھنے کے لیے غریبوں، مسکینوں، یتیموں اور بیواؤں کی مدد کرنا انتہائی ضروری ہے۔ اسلام بھی ضرورتمندوں کی ضرورت پوری کرنے اور حاجتمندوں کی حاجت روائی کرنے پر زور دیتا ہے۔ معاشی توازن برقرار رکھنے کے لیے اسلام نے مسلمانوں کو صدقہ، فطرانہ اور زکوٰۃ کا نظام دیا تاکہ دولت صرف امیر اور مالداروں کے ہاتھوں میں مرکوز ہوکر نہ رہ جائے؛ بلکہ غریب بھی بآسانی گزر بسر کرسکیں۔ اسی لیے اسلام میں سال میں ایک مرتبہ مخصوص شرح کے مطابق مالداروں پر زکوٰۃ فرض کی گئی ہے جبکہ صدقات کے لیے کوئی قید نہیں لگائی گئی۔ مسلمانوں کو حکم دیا گیا کہ وہ وقتاً فوقتاً اپنے مال میں سے صدقہ کرتے رہیں؛ تاکہ اس کی برکتیں بھی حاصل ہوتی رہیں اور غریبوں کی مدد بھی ہوتی رہے

چونکہ رمضان المبارک کا مہینہ ضرورت مند اورمستحق لوگوں کے ساتھ صلہ رحمی کا درس دیتا ہے ۔ اس مہینے کی یہ برکت ہے کہ غریب سے غریب بھی اس مہینے میں بھوکا نہیں رہتا

اسی کے پیش نظر رمضان المبارک کے مقدس مہینے میں جمیعت علماء گوونڈی کے اراکین و ذمہ داران کی طرف سے علاقے کے تقریبا ۳۰۰ غرباء میں ۱۲۰۰ روپیے پر مشتمل اناج دال،چاول،کھجور،تیل وغیرہ کی شکل میں تقسیم کیا گیا

انتہائی قابل مبارک باد ہیں جمیعت علماء گوونڈی کے صدر مکرم مولانامحمد محسن خان صاحب اور جنرل سیکرٹری مولانا صدر عالم صاحب قاسمی دامت برکاتہم کی ذات گرامی کہ جن کی سربراہی اور سرپرستی میں اتنا عظیم الشان کام انجام دیا جارہا ہے

اللہ رب العزت کی ذات سے دعا گو ہوں کہ اللہ رب العزت حضرت صدر مکرم ، جنرل سیکرٹری اور اراکین جمیعت کو اپنی شایان شان بدلہ عطا فرمائے

اس عظیم الشان موقع پر چند قابل ذکر افراد موجود تھے جو تقسیم اناج میں مکمل اپنا تعاون پیش کررہے تھے خصوصاً حاجی قمر عالم صاحب قاسمی مولانامحمد اشرف نعمانی مولانا مبارک ندوی افضل بھائی بیگ والے اہل اللہ صاحب پیش پیش تھے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker