گوشہ خواتین

“جنم دن مبارک”

 

(نظم)

شب کو میری کھڑکی پر

چاند جب اتر آیا

دیکھ کر اسے مجھ کو

پھر خیال یہ آیا

ہائے اس ستم گر کا

آج تو جنم دن تھا

خطا تو گئی مجھ سے

ازالہ کیسے ممکن ہو

میں اگر جو یہ کر لوں

ایک نظم تحفے میں

اس کے نام گر لکھ دوں

اس خوشی کے لمحے کو

اور پھر امر کر دوں

یا اگر جو یوں کر لوں

پاس آ کے دھیرے سے

سر کو رکھ کے کاندھے پہ

اور کہوں مبارک ہو

ساعتیں جنم دن کی

پھر تو مان جاؤگے؟؟

تم میرا یقیں جانو

تمہارے اس جنم دن کی

اس خوشی کی ساعت کی

بہت منتظر تھی میں

کتنے خواب دیکھے تھے

کتنی آرزوئیں تھیں

سن کے میری باتوں کو

مسکرا کے ہولے سے

ہاتھ رکھ کے ہاتھوں پہ

نرم، دھیمے لہجے میں

صرف یہ کہا اس نے

پاگل لڑکی دیکھو نا

ایک بار پھر سے ہم

ہو گئے قضا تم سے!!

شہلا کلیم

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker