ہندوستان

ایک ساتھ پورے ملک میں ہجومی تشدد کے واقعات بلا کسی بڑی منصوبہ بندی کے نہیں ہوسکتے!

مولانا محمد متین الحق اسامہ کی ہدایت پر جمعیۃ علماء اتر پردیش کے وفد نے مدرسہ دار العلوم فیض عام پہنچ کر متاثرین سے ملاقات کی

اناؤ۔۲۲؍جولائی: (پریس ریلیز) اناؤ میں طلباء سے مارپیٹ کے بعد حالات جاننے کیلئے جمعیۃ علماء اتر پردیش کے صدر مولانا محمد متین الحق اسامہ قاسمی کی ہدایت پر ایک وفد ریاستی سکریٹری قاری عبد المعید چودھری کی قیادت میںمولاناانصار احمد جامعی امام وخطیب مسجد محمودیہ اجیت گنج و جمعیۃ علماء شہر کانپور کے خزانچی مولانا انیس الرحمن قاسمی ، قاری جنید احمد راعینی کے ہمراہ مدرسہ دار العلوم فیض عام پہنچاجہاں ، تمام عہدیداران جمعیۃ نے مدرسہ کے نائب مہتمم مولانانعیم مصباحی نائب قاضی شہر کے ساتھ متاثربچوں سے ملاقات کی۔ انہیں اپنی جانب سے ہر ممکن تعاون دینے کی بات کہی۔اس ملاقات کے دوران ساتھ میں موجود رہے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے مولانا نعیم مصباحی نے عہدیداران جمعیۃ کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے واقعات سے ہمارے ملک کی شبیہ خراب ہوتی ہے، صدیوں سے چلے آ رہے بھائی چارے کے ماحول کو کچھ شرپسندوں کے ذریعہ خراب کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔جمعیۃ کے ریاستی سکریٹری قاری عبد المعید چودھری نے کہا کہ ہمارے عظیم ملک ہندوستان میں مسلسل بھیڑ کے ذریعہ جان لیوا تشدد کے واقعات رونما ہونے سے یہاں بسنے والے کروڑوں شہری پریشان ہیں۔ ہجومی تشدد کے ذریعہ جھار کھنڈ میں تبریز انصاری کے قتل کے بعد ملک کے مختلف حصوں میں ایسے واقعات رونما ہو رہے ہیں، اناؤ میں بھی مدرسہ کے بچوں کی پٹائی ، چھپرہ ،سون بھدر اور رانچی میں لوگوں کے اجتماعی قتل وغیرہ ایسے معاملے ہیں، جنہیں بھیڑ کی شکل میں شرپسندلوگوںنے انجام دئے۔پولیس اور انتظامیہ کی ذمہ داری ہے کہ ایسے لوگوں کو گرفتار کرکے ان کو قرار واقعی سزا دلائے۔ وفد میں شامل مسجد محمودیہ اجیت گنج کے امام خطیب مولانا انصار احمد جامعی نے کہا کہ معصوموں کا قتل کرنے والے اس طرح کے جان لیوا منصوبے کہاں تیار ہو رہے ہیں ؟اس کی جانچ ہونی چاہئے کیونکہ پورے ملک میں مسلسل ایسے واقعات بلا کسی بڑی منصوبہ بندی کے نہیں ہو سکتے۔ ایسے واقعات سے حکومتیں بھی بدنام ہوتی ہیںاور شرپسند کوئی بھی ہو اس پر کارروائی ہونی چاہئے۔مولانا انیس الرحمن قاسمی نے صحافیوں سے ہی سوال کرتے ہوئے کہا کہ شرپسند عناصرہمارے ملک کو کدھر لے جانا چاہتے ہیں، ایسے میںمرکز اور ریاست کے اقتدار میں بیٹھی حکومتوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ اپنی ذمہ داریوں کو بخوبی ادا کریں، مظلومین کی مدد کریں ، ظلم کرنے والوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کریں ، اور ملک کو بربادی کی جانب نہ ڈھکیلیں ۔آخر میں پھر قاری عبد المعید چودھری نے سون بھد ر کے اجتماعی قتل کی سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ ہم امید کرتے ہیں کہ وہاں کے مظلومین کو جلد انصاف ملے گا، اس واقعہ سے پورے ملک میں صوبہ کی بدنامی ہوئی ہے۔ایسے واقعات ملک کی یکجہتی اور بھائی چارے کو نقصان پہنچاتے ہیں اور ایسے واقعات آنے والے دنوں میں اورزیادہ نہ ہوں اس کے لئے حکومتوں کو بڑے اور ٹھوس قدم اٹھانے ہوں گے، پارلیمنٹ اور اسمبلیوں میں ماب لنچنگ کے خلاف جلد سے جلد سخت قانون بناکر نافذ کرنا پڑے گا۔قاری صاحب نے کہا کہ ملک کی ترقی امن اور انصاف کے بغیر ناممکن ہے اس کے لئے تمام باشندگان ملک کو بلاتفریق مذہب سب کو مل کر چلنا ہوگا۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker