ہندوستان

جمعیۃ علماء ایم پی کےنمائندہ وفد نے محمد اسلم (اشوک نگر) کے سلسلے میں اس کےاہل خانہ سے کی ملاقات، مکمل قانونی امداد کی یقین دہانی

 

جمعیت علمائے ہند کے نائب صدر حضرت مولانا مفتی عبد الرزاق خان صاحب کے حکم پر جمعیت علماء مدھیہ پردیش کا ایک نمائندہ وفد مفتی ضیاء اللہ قاسمی (جنرل سیکریٹری جمعیۃ علماء ایم پی) کی سرپرستی میں 21 اگست 2019 کو مونگاولی پہنچا؛ جہاں وفد نے اسلم کے سلسلے میں اس کے والد اور خاندان سے ملاقات کی اور ان کی خیریت دریافت کی، ساتھ ہی اسلم کے خاندان کو قانونی لڑائی کےلیے ہر طرح کی ممکن مدد کی یقین دہانی کرائی، غور طلب بات یہ ہے کہ اسلم معاملے کو آج پورا ایک ہفتہ بیت گیا ہے؛ لیکن افسوس کہ ابھی تک اسلم کے والد جناب اسلام صاحب کے ہاتھ میں اسلم پر ہوئی ایف آئی آر کی کاپی تک نہیں پہنچائی گئی، شاید یہ جان بوجھ کر کیا جارہا ہے۔ اسلم کے والد نے بتایا کہ ان کے پاس لگاتار مختلف لوگوں کے فون اس معاملے کی معلومات حاصل کرنےکےلیے آرہے ہیں؛ لیکن ان کی خبر لینے ابھی تک کسی تنظیم کا کوئی نمائندہ شخص ان تک نہیں پہنچا، آج جمعیت علماء ہند کا نمائندہ وفد ان سے ملا اور انہیں مکمل طور پر قانونی امداد کا یقین دلایا۔
اس تعلق سے جمعیت علماء مدھیہ پردیش نے چندیری، مونگاولی اور اشوک نگر کی جمعیۃ اکائیوں کو مختلف کام سونپے ہیں جو تین دن کے اندر جمعیۃ علماء مدھیہ پردیش کو اپنی رپورٹ پیش کریں گی۔ بہت سارے ایسے معاملے ہیں جن کی پرتیں کھلنا ابھی باقی ہیں اگر صحیح طور پر قانونی لڑائی لڑی جائے تو مظلوم اسلم کو انصاف ضرور ملےگا۔ ان شاء اللہ !
جمعیۃ کے اس نمائندہ وفد کی ملاقات کے موقع پر مولانا قاضی نور اللہ یوسف زئی، قاضی شہر گنا، مولانا امین چندیری، مفتی سلمان پپرئی، حافظ محمد جاوید پپرئی، حافظ محمد سلیم اشوک نگر، مولانا اظہر مونگاولی، مولانا سلیم چندیری، ایڈووکیٹ ساجد مونگاولی اور اسعد بھائی مونگاولی کے علاوہ بڑی تعداد میں چندیری، مونگاولی، پپرئی اور اشوک نگر کے ذمےدار حضرات موجود رہے۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker