ہندوستان

شہر میں پھیلے تجاوزات نے اختیار کی خوفناک شکل

 

تجاوزات کے سبب بازاروں سے پیدل گزرنا بھی مشکل، بائکیں اور ای رکشا بھی جام کا بڑا سبب

دیوبند۔۲۲؍ اگست(رضوان سلمانی) شہر میں پھیلے تجاوزات نے خوفناک شکل اختیار کرلی ہے، شہر کے تمام بازار مکمل طور پر تجاوزات کی زد میں ہیں، جس کی وجہ سے بازار میں بھی پیدل چلنا بھی مشکل ہوگیا،لیکن مقامی انتظامیہ اس طرف سے پوری طرح آنکھیں بندکئے ہوئے ہے۔ریلوے روڈ ، بھائیلہ روڈ ، ایم بی ڈی چوک ، اناج منڈی ، سبزی منڈی ، بس اسٹینڈ روڈ ، مین بازار ، مینا بازار ، منگلور روڈ سمیت پورا شہر تجاوزات کی گرفت میں ہے۔ عالم یہ ہے کہ جام کی وجہ سے سڑکوں پر سے گزرنا بھی مشکل ہوگیا ہے۔ شاستری چوک اور سانپلہ روڈ تیراہے پر تجاوزات کا سب سے براحال۔ دکانداروں نے بازاروں میں کئی فٹ سڑکوں پرناجائز طریقہ سے قبضے جما رکھے ہیں۔ سڑک کے دونوں اطراف میںریہڑیاںاور موٹرسائیکلیں کھڑی ہونے کی وجہ سے بھی دن بھر جام رہتا ہے۔ ریلوے اسٹیشن سمیت شہر کے بینکوں کے باہر موٹرسائیکلیںاور دیگر گاڑیاں کھڑے ہونے کی وجہ سے بھی لوگوں کو آنے اور جانے میں پریشانی کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ لوگوں کا کہنا ہے کہ تجاوزات شہر کا سب سے بڑا مسئلہ بن چکا ہے ، لیکن مقامی پولیس انتظامیہ اس طرف توجہ دینے کو تیار نہیںہے۔ انتظامیہ کی جانب سے مہم کے ذریعہ تجاوزات کو ختم کیا جاتا ہے ، لیکن کچھ عرصہ بعد دوبارہ قبضے کرلئے جاتے ہیں،جس کی وجہ سے یہ مسئلہ جوںکاتوں رہتاہے۔ایس ڈی ایم راکیش کمار کا کہنا ہے کہ وقتا فوقتا تجاوزات کے خلاف مہم چلائی جاتی ہے۔ جلد ہی دوبارہ مہم چلاکر شہر کو تجاوزات سے آزاد کرایا جائے گا۔بازاروں میں ٹریفک نظام بہتر طورپر نافد نہ ہونے کے سبب بھی جام کی صورتحال بنی رہتی ہے، دن میں بڑی گاڑیوں کی انٹری منع نہ ہونے کی وجہ سے گاڑیوںکی آمدو رفت بازاروں میں رہتی ہے جو جام کا سبب بنتا ہے، اس طرف کسی افسرنے ابھی تک توجہ نہیں کی، لوگوں نے بازاروں میں دن میں بڑی گاڑیوںکے داخلہ پر پابندی کی مانگ کی ہے، وہیں بے ترتیت طریقہ سے چلنے والے ای رکشہ بغیر کسی قاعدے کے کہیں بھی کھڑے کردیئے جاتے ہیں، اتنا ہی نہیںا کثر بازاروں میںای رکشاؤں کو لیکر بحث بازی بھی ہوتی رہتی ہے۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker