ہندوستان

مرکزالمعارف کے قومی انگریزی تقریری مقابلے میں مرکز اسلامی انکلیشور کے طلبہ کی نمایاں کامیابی پر مبارکباد

مرکز اسلامی انکلیشور کے طلبہ کی نمایاں کامیابی دراصل مولانا اسماعیل شہید ماکروڈ کے خلوص کا ثمرہ ہے : مولانا نوشیر احمد
علماء و دانشوران نے کامیاب طلباء اور مہتمم مولانا موسی ماکروڈ کو مبارکباد پیش کی
نئ دہلی:7 اکتوبر (پریس ریلیز) مرکز المعارف ریسرچ اینڈ ایجوکیشن سینٹر کی تاسیس پر پچیس سال مکمل ہونے کی مناسبت سے دہلی میں سہ روزہ سلور جبلی پروگرام کا انعقاد کیاگیا،جس میں ملک و بیرون ملک سے مرکز کے جدید و قدیم فضلا اور علمائے کرام و دانشوران نے شرکت کی اور اس پروگرام میں مرکز کی پچیس سالہ خدمات کو خراج تحسین پیش کیاگیا۔اس موقع پر علمائے کرام نے اپنے تاثرات میں کہاکہ اکابرعلماء کبھی بھی انگریزی زبان سیکھنے کے خلاف نہیں رہے،بلکہ انھوں نے دین کی اشاعت کے مقصد سے مختلف زبانوں میں مہارت حاصل کرنے کی حوصلہ افزائی کی ہے اور اپنے فضلاکو اس کی تلقین کی ہے۔انہوں نے کہاکہ اکابر کے اسی نظریے کے تحت پچیس سال قبل مرکزالمعارف کا قیام عمل میں لایاگیا تھاجہاں سے اب تک سیکڑوں فضلائے مدارس انگریزی زبان کی تعلیم حاصل کرچکے ہیں اوراس وقت ملک و بیرون ملک میں تعلیم اور خدمتِ دین کا فریضہ انجام دے رہے ہیں۔ملک بھر میں اس کاسلسلہ پھیل رہاہے اورمختلف مقامات پر سینٹرکھل رہے ہیں۔مرکز المعارف سے پڑھے ہوئے فضلاء انگریزی زبان میں بولنے اور لکھنے میں ماہر ہوتے ہیں۔واضح رہے کہ اس پروگرام کے ایک سیشن میں مقالہ خوانی کا پروگرام رکھاگیاتھاجس میں ملک کے نامور اہل قلم نے مسلمانوں کی موجودہ تعلیمی ضروریات پر پرمغز مقالات پیش کیے۔جبکہ ایک سیشن میں انگریزی زبان میں مسابقہ خطابت کا انعقاد کیاگیا تھا،جس میں دارالعلوم دیوبند،دارالعلوم وقف دیوبند اور اشاعت العلوم اکل کوا سمیت گیارہ اداروں کے کل 33طلباء نے حصہ لیا اور مختلف موضوعات پر تقاریرپیش کیں۔اس مسابقے میں دارالعلوم مرکز اسلامی انکلیشور،گجرات کے شعبہ انگریزی کے طلباء نے بھی حصہ لیا اور اول،دوم و سوم پوزیشن حاصل کرنے کے ساتھ”ونرآف دی ایئر“کا اعزاز بھی اپنے نام کیا۔قابل ذکر ہے کہ اس ادارے کو گزشتہ دوسال سے لگاتار یہ اعزاز حاصل ہورہاہے۔اس پروگرام میں مرکز اسلامی کے بانی ومہتمم معروف عالم دین مولاناموسی ماکروڈکو مرکز المعارف کے سربراہ اور ایم پی مولانا بدرالدین اجمل قاسمی نے اعزازی تمغہ پیش کیا۔اس عظیم کامیابی پر مرکزاسلامی انکلیشورکے کامیاب طلبائے کرام اور ادارے کے مہتمم مولانا موسی ماکروڈ کو علماء و دانشوران کی جانب سے مبارکباد دینے کا سلسلہ جاری ہے۔ اس موقع پرمولانااسرارالحق قاسمیؒ(سابق ایم پی)کے خادم خاص اوردارالعلوم اسراریہ سنتوشپورکے مہتمم مولانانوشیراحمد جو مرکز المعارف کے سلور جبلی پروگرام میں مہمان خصوصی کی حیثیت سے مدعو تھے انہوں نے مرکز اسلامی کے کامیاب طلباء کو مبارکباد دی اور خصوصاً مولانا موسی ماکروڈکی خدمت میں ہدیہ تبریک و تہنیت پیش کیا اور کہاہے کہ مرکز اسلامی انکلیشور نہ صرف اعلیٰ دینی تعلیم دے رہاہے اور وہاں فضیلت و افتاء تک کی تعلیم کا معقول انتظام ہے بلکہ فضلائے مدارس کو عصری علوم سے جوڑنے کے سلسلے میں قابل قدر محنت کی جارہی ہے،جس کا نتیجہ ہے کہ وہاں کے طلباء نے مرکز المعارف کے پلیٹ فارم تلے ہونے والے اس آل انڈیامسابقہ خطابت میں نمایاں کامیابی حاصل کی اور اول،دوم و سوم پوزیشن حاصل کرکے ادارے کا نام روشن کیاہے۔انہوں نے کہاکہ جب مرکزاسلامی میں انگریزی کے سینٹر کاقیام عمل میں آیاتھا تومولانااسرارالحق قاسمی نے ادارے کا دورہ کیاتھا اور مولاناموسی ماکروڈکومبارکباد پیش کرتے ہوئے کہاتھا کہ آپ نے وقت کی ایک اہم ضرورت کی تکمیل کی ہے اور ان شاء اللہ آپ کے چست درست نظام کا بہتر نتیجہ سامنے آئے گا۔مولانانوشیراحمد نے اس موقع پرمولانااسماعیل موسی ماکروڈرحمۃ اللہ علیہ جو مرکز المعارف کے اولین فضلاء میں شامل تھے اورانکی ہی دلچسپی کی وجہ سے انکلیشور میں مرکز المعارف کے سینٹر کا قیام عمل میں آیاتھااور سال بھر قبل سڑک حادثے میں ان کی شہادت ہوگئی تھی انہیں بھی خراج عقیدت پیش کیا اور ان کی مغفرت و ترقی درجات کے لیے دعاء کی۔مبارکباد پیش کرنے والوں میں علی گڑھ یونیورسٹی اولڈبوائزکے انجینئروقار احمد خان،جمبوسر دارالعلوم کے استاذ حدیث مولانا عبدالرشید ندوی خانپوری،مدرسہ عبدالرب دہلی کے شیخ الحدیث مولانا افتخار حسین قاسمی مدنی،پونہ کالج کے ڈاکٹر معین الدین غازی،مسجد الفلاح لیسٹر کے چیئر مین ڈاکٹر عبدالکریم کے نام خاص طورپر قابل ذکر ہیں۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker