ہندوستان

مہابلی پورم میں مودی اور چینی صدر کے درمیان سربراہ کانفرنس

 

سرحدی تنازعہ، تجارت سمیت مختلف امو رپر تبادلہ خیال

مہابلی پورم ۔۱۱؍اکتوبر(یواین آئی)وزیراعظم نریندرمودی اور چین کے صدر شی جنپنگ کے درمیان جمعہ سے تمل ناڈو کے مہابلی پورم میں ہونے والی میٹنگ میں دونوں لیڈروں کے علاوہ چین کے وزیر خارجہ وانگ یی،ہندوستان کے وزیر خارجہ ایس جے شنکر اور قومی سکیورٹی کے مشیر اجیت ڈوبھال پر بھی سبھی کی نظریں رہیں گی۔دونوں ملکوں کو اس میٹنگ سے کافی امیدیں ہیں۔چین کی جانب سے حالانکہ میٹنگ سے ٹھیک پہلے کشمیر پر بیان کے بعد تھوڑے ٹکراؤ کی صورت حال ضرور بنی ہے،لیکن 2017 میں ڈوکلام تنازعہ اور ووہان میں 2018 میں ہوئی پہلی غیر رسمی میٹنگ کے بعد دونوں ملکوں کی سرحدوں میں مبینہ طورپر حالات پر امن ہیں۔مسٹر مودی اور چینی صدر کے درمیان میٹنگ میں ممکن ہے کہ سرحدی سلامتی سے متعلق مسئلے،تجارت اور دونوں ملکوں کے درمیان رشتے بہتر کرنے کی سمت میں مشترکہ فوجی مشقوں کے سلسلے میں بات چیت ہوسکتی ہے۔مسٹر ڈوبھال اور مسٹر وانگ کے درمیان ستمبر میں نئی دہلی میں ملاقات ہونی تھی لیکن چین کے ذریعہ مودی حکومت کے جموں و کشمیر سے آئینی آرٹیکل 370ہٹانے کے سلسلے میں دئے گئے متنازعہ بیان کے بعد دونوں ملکوں کے درمیان ملاقات ملتوی ہوگئی تھی۔مسٹر مودی اورجنپنگ کے درمیان میٹنگ میں مسٹر ڈوبھال اور مسٹر وانگ کے درمیان اگلے دور کی ملاقات پر کوئی فیصلہ کیاجاسکتا ہے۔مسٹر ڈوبھال اور وانگ تیز طرار شبیہ والے مانے جاتے ہیں اور مسٹر وانگ نے بھی کشمیر پر وہی خیال ظاہر کیاتھا جیسا پاکستان نےاس ضمن میں اقوام متحدہ جنرل اسمبلی کی میٹنگ میں کہاتھا۔مسٹر جے شنکر چین معاملوں کے اچھے ماہرکے طورپر جانے جاتے ہیں اور ایسا مانا جاتا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان رشتے جب اچھے نہیں تھے تو اس وقت مسٹر جے شنکر نے ہی مسٹر مودی اور جنپنگ کے درمیان غیر رسمی میٹنگ کا منصوبہ بنایا تھا۔مسٹر جے شنکر کو قریب سے جاننے والے لوگوں کے مطابق انہیں مودی حکومت میں ان کی قابلیت کی بنیاد پر شامل کیاگیاتھا۔انہیں زمینی حقیقت سےواقفیت رکھنے اور صبر و تحمل سے کام لینے والے لوگوں میں شمار کیاجاتا ہے۔ظاہر ہےکہ مسٹر مودی اور جنپنگ کے درمیان دو دنوں میں میٹنگ کے دوران مسٹر جے شنکر کی قابلیت کا بھی امتحان ہوگا۔چنئی پہنچنے پرمودی نے ٹویٹ کرکے کہا،’’چنئی پہنچ چکا ہون۔میں تمل ناڈو آکر بہت خوش ہوں۔یہ ریاست زبردست ثقافت اور اپنی مہمان نوازی کےلئے جانی جاتی ہے۔یہ بہت ہی فخر کی بات ہے کہ تمل ناڈو صدر جنپنگ کا استقبال کررہا ہے۔یہ میٹنگ ہندوستان اور چین کے رشتے کو مضبوط کرےگی۔‘‘چین کے صدر شی جن پنگ وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ دوسری غیر رسمی سربراہ مذاکرات کے لئے جمعہ دوپہر بعد چنئی پہنچے جہاں ان کا شاندار خیر مقدم کیا گیا۔سہ پہر تقریباً دو بجے ان ہوائی جہاز چنئی بین الاقوامی ہوائی اڈے پر اترا۔ تمل ناڈو کے گورنر بنواری لال پروہت، وزیر اعلی ای کے پلاني سوامي، نائب وزیر اعلی او پنيرسیلوم،ہندوستان میں چین کے سفیر سن ويدونگ نے ​​چینی صدر کا خیر مقدم کیا۔مسٹر شی جن پنگ کے استقبال کے لئے تمل ناڈو کے مختلف روایتی پوشاک میں فنکاروں نے لوك رقص اور موسیقی کی دھن پر ان کا استقبال کیاگیا۔ ثقافت اور آرٹ کے سابق طالب مسٹر شی جن پنگ نے بہت دلچسپی سے ان کا کچھ لمحہ ٹھہر کر لطف اٹھایا اور پھر وہ سرکاری گاڑی سے ہوٹل کے لئے روانہ ہو گئے۔چین کے وزیر خارجہ وانگ یی، چینی کمیونسٹ پارٹی کے پولٹ بیورو کے بااثر رکن دنگ شوئےشيانگ، چینی کمیونسٹ پارٹی کے ایک اوربارسوخ رکن اور خارجہ امور کے کمیشن کے ڈائریکٹر یانگ جیچي بھی ان کے ساتھ آئے ہیں۔چینی صدر ہوٹل میں کچھ دیر قیام کے بعد تقریبا چار بجے سڑک کے ذریعے تقریبا 55 کلومیٹر دور ماملاپورم کے لئے روانہ ہوئےجہاں وزیر اعظم مسٹر مودی ان کا استقبال کیا۔ یہاں دونوں رہنماؤں کے درمیان غیر رسمی سربراہ مالاقات ہوئی جس میں کاروبار، سرحد سمیت مختلف باہمی مسائل کے علاوہ کئی علاقائی اور عالمی امور پر بھی بات چیت ہوئی۔ دریں اثناء وزیر خارجہ ایس جے شنكر، قومی سلامتی کے مشیر اجیت ڈوبھال اور خارجہ سکریٹری وجے گوکھلے بھی ماملاپورم میں موجود ہیں۔مسٹر شی جن پنگ شام پانچ بجے تین تاریخی ورثہ ارجن پینناس، پانچ رتھ اور يونسكو عالمی ورثے میں شامل شور مندر دیکھنے گئے۔ اورشام چھ بجے شور ثقافتی شعبے کی جانب سے ہونے والے ثقافتی پروگرام میں شامل ہوئے اور ہوٹل روانہ ہوگئے اس سے قبل وہ شام میں وزیر اعظم مودی کی جانب سے ان کے اعزاز میں دیئے گئے ضیافت میں شامل ہوئے۔مسٹر شی جن پنگ سنیچر کو صبح نو بج کر 50 منٹ پر تاج فیشرمین کوو ریزورٹ پہنچیں گے، جہاں وہ اور مسٹر مودی صبح 10 بجے تک بات چیت کریں گے۔ اس کے بعد مسٹر جن پنگ 10 بج کر 50 منٹ پر مسٹر مودی کے ساتھ وفد سطح کی بات چیت کریں گے۔ وہ مسٹر مودی کی طرف سے ان کے اعزاز میں دیئے گئےظہرانے میں شامل ہوں گے۔مسٹر جن پنگ ہفتہ کو ہوائی اڈے کے لئے روانہ ہوں گے اوردوپہر ڈیڑھ بجے نیپال کے لئے روانہ ہو جائیں گے۔قبل ازیں وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ غیر رسمی میٹنگ میں شرکت کے لئے آنے والے چین کے صدر شی جن پنگ کی آمد سے چند گھنٹے پہلے آئی ٹی سی گرینڈ چولا (جہاں مسٹر جن پنگ کو ٹھہرنا ہے) کے سامنے احتجاج کر نے والے پانچ افراد سمیت 11 تبتی لوگوں كو پولیس نے جمعہ کو گرفتار کر لیا۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ حراست میں لئے گئے چھ افراد بنگلور سے سڑک کے ذریعے چنئی ہوائی اڈے پہنچے تھے تاکہ وہ سیاہ پرچم کے مظاہرے میں حصہ لے سکیں۔ تمام لوگوں کو اگرچہ حراست میں لے لیا گیا ہے۔پولیس نے بتایا کہ دو خواتین سمیت پانچ تبتی تبت کا پرچم لئے ہائی سیکورٹی حلقوں کو توڑتے ہوئے ہوٹل آئی ٹی سی گرینڈ چولا کے پاس پہنچ گئے اور مسٹر جن پنگ کے خلاف نعرے بازی کرتے ہوئے احتجاج کرنے کی کوشش شروع کر دی۔ غور طلب ہے کہ مسٹر جن پنگ اسی ہوٹل میں ٹھہرنے والے ہیں۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker