ہندوستان

کل جماعتی میٹنگ میں فاروق عبداللہ کو چھوڑنے کے لئے آواز اٹھی، تمام موضوعات پر تبادلہ خیال کے لئے مودی حکومت تیار

 

نئی دہلی۔۱۷؍نومبر: لوک سبھا الیکشن میں کانگریس کے لیڈرادھیررنجن چودھری نے کہا کہ حکومت کے ذریعہ بلائی گئی میٹنگ میں اپوزیشن نے مطالبہ کیا کہ اقتصادی بحران، بے روزگاری اورزراعت سے متعلق موضوعات پرسیشن کے دوران تبادلہ خیال ہونا چاہئے۔پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس سے قبل وزیراعظم نریندر مودی نے اتوارکو کل جماعتی میٹنگ میں یقین دہانی کرائی کہ حکومت پارلیمنٹ کے سرمائی اجلاس میں تمام موضوعات پر تبادلہ خیال کرنے کے لئے تیارہے۔ جبکہ اپوزیشن نے لوک سبھا رکن پارلیمنٹ اور جموں وکشمیر کے سابق وزیراعلیٰ فاروق عبداللہ کو حراست میں رکھے جانے کا موضوع اٹھاتے ہوئے کہا کہ انہیں جلد ازجلد چھوڑنے اورایوان میں حصہ لینے کی اجازت دینے کا مطالبہ کیا۔لوک سبھا میں کانگریس کے لیڈرادھیر رنجن چودھری نےکہا کہ حکومت کے ذریعہ بلائی گئی میٹنگ میں اپوزیشن نے مطالبہ کیا ہے کہ اقتصادی بحران، بے روزگاری اورزراعت سے متعلق موضوعات پرسیشن کے دوران بحث ہونی چاہئے۔ کل جماعتی میٹنگ کے بعد پرہاد جوشی نے بتایا کہ وزیراعظم مودی نے سبھی جماعتوں سے کہا کہ حکومت دونوں ایوانوں کے ضوابط کے مطابق سبھی معاملات پرتبادلہ خیال کرے گی۔ 27 جماعتوں کے ساتھ ہوئی میٹنگ میں وزیراعظم مودی نے کہا ہے کہ ایوان کا سب سےاہم کا تبادلہ خیال کرنا اور بحث کرنا ہے، جسے بخوبی نبھایا جانا چاہئے۔ وزیراعظم نریندرمودی نے سبھی جماعتوں سے اپیل کی ہے کہ یہ سیشن گزشتہ سیشن سے بھی بہترین اوریادگارہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ایوان کے ضوابط اور عمل کے دائرے میں سبھی موضوعات پرتبادلہ خیال کے لئے تیارہے۔ راجیہ سبھا میں اپوزیشن لیڈرغلام نبی آزاد نے کہا کہ کسی پارلیمنٹ کو غیرقانونی طریقے سے حراست میں کیسے لیا جاسکتا ہے؟ اسے پارلیمنٹ میں حصہ لینے کی اجازت دی جانی چاہئے۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker