برجستہہندوستان

سپریم کورٹ کے فیصلے میں متضاد نکات ہیں، ریویو پٹیشن مسلمانوں کا قانونی حق : مولانا محمد ولی رحمانی

لکھنؤیکم؍دسمبر: آل انڈیا مسلم پرسنل لا بورڈ (اے آئی ایم پی ایل بی) نے اتوار کے روز کہا ہے کہ ملک میں 99 فیصد مسلمان ایودھیا سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے پر نظرثانی چاہتے ہیں ، اس لیے نظرثانی درخواست دائر کی جارہی ہے۔ اے آئی ایم پی ایل بی کے جنرل سکریٹری مولانا ولی رحمانی نے کہا ہے کہ عدالت کے فیصلے میں بہت سے متضاد نکات ہیں۔ مولانا رحمانی نے کہاہے کہ یہ وہ لوگ ہیں جو مسجد کے مفاد میں نہیں ہیں۔ وہ خوف کے ساتھ رہتے ہیں اور چاہتے ہیں کہ دوسرے بھی وہی کریں۔ ان سے پوچھا جائے کہ انہوں نے مسلم کمیونٹی کے لیے کیاکیاہے؟ دانشور اس مسئلے کو اٹھا رہے ہیں ، لیکن ان کے پاس اس مسئلے کو حل کرنے کا کوئی حقیقی منصوبہ نہیں ہے۔مولانارحمانی نے کہاہے کہ مسلمانوں کوعدلیہ پراعتمادہے،اس لیے ایک نظرثانی درخواست دائر کی جارہی ہے۔ اگر یہ سمجھاجاتا ہے کہ زیادہ تر مسلمان جائزہ لینے کے حق میں نہیں ہیں تو یہ غلط ہے ، جبکہ 99 فی صدمسلمان یہ چاہتے ہیں۔ریویوپٹیشن داخل کرنا ہمارا قانونی حق ہے۔ درخواست خارج ہونے کے شبہ کے بارے میں پوچھے جانے پرمولانارحمانی نے کہا کہ اس کا یہ مطلب نہیں ہے کہ ہم عرضی داخل نہیں کریں گے۔دوسری جانب مرکزی وزیر برائے اقلیتی امور مختار عباس نقوی نے بورڈ کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے اسے معاشرے میں تقسیم کی کوشش قرار دیا ہے۔بورڈ کے بیان کے بعد مرکزی اقلیتی بہبودکے وزیر مختار عباس نقوی نے اس کی مذمت کی ہے۔ نقوی نے کہا کہ یہ لوگ انتشار کا ماحول پیدا کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ نقوی نے کہاہے کہ اے آئی ایم پی ایل بی اورجمیعۃ علمائے ہند کے بیانات معاشرے کو تقسیم کرنے والے ہیں۔ سپریم کورٹ نے اس معاملے میں حل کیا ہے اور اب اس طرح کا بیان مناسب نہیں ہے۔فیصلے کے بعد ، بہت ساری مسلم تنظیموں نے کئی دہائیوں پرانے معاملے کو حل کرنے کی بات کی ہے۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker