ہندوستان

ایودھیا : مسجد کے لئے پانچ ایکڑ زمین کی تلاش جاری، تین مقامات نشان زد

 

ایودھیا۔۳؍دسمبر: بابری مسجدکی جگہ نئی مسجد بنانے کے سپریم کورٹ کے مشورے کومسلم فریقوں نے گرچہ مستردکردیاہے ۔پانچ ایکڑ اراضی کی تجویز پرمسلم پرسنل لاء بورڈاورجمیعۃ علمائے ہندنے صاف صاف کہاہے کہ وہ اسے قبول نہیں کریں گے۔ریویوپٹیشن داخل کرنے کودیکھتے ہوئے سرکارکس قدرجلدی میں ہے کہ اترپردیش کی یوگی حکومت مسجدکے لیے پانچ ایکڑ اراضی تلاش کرنے کے لیے مصروف عمل ہے۔ یوگی حکومت نے ایودھیا میں مسجدکے لیے تین مقامات کی بھی نشاندہی کی ہے۔سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ہی یوگی آدتیہ ناتھ کی سربراہی میں اتر پردیش حکومت نے ایودھیا میں مسجد کے لیے 5 ایکڑ اراضی کی تلاش شروع کی۔ یوگی حکومت نے مسجد کے لیے تین مقامات کی نشاندہی کی ہے۔ نوودیا ودھیالیہ کے سامنے ایک جگہ ، دوسری اراضی کی شناخت ملک پور پرائمری اسکول کے قریب کی گئی ہے۔ تیسرا مقام چاند پور ہریونش کے قریب ہوسکتاہے ۔یہ تینوں جگہیں ایودھیا کے سرحدی علاقے میں ہیں۔نو نومبر کو ، سپریم کورٹ نے ایودھیا اراضی کے تنازعہ پر ایک تاریخی فیصلہ دیا تھا۔ یہ تنازعہ کئی دہائیوں سے ایودھیا میں چل رہا تھا۔مسجدکے لیے پانچ ایکڑ اراضی حاصل کرنے کے سلسلے میں مسلم پرسنل لا بورڈنے واضح طور پر 5 ایکڑ اراضی نہ لینے کا فیصلہ کیا۔ ایودھیا کیس سے وابستہ اقبال انصاری ولد ہاشم انصاری اراضی کے حصول کے حق میں ہیں ، لیکن وہ 67 ایکڑ اراضی میں سے مسجدکے لیے اراضی چاہتے ہیں۔سنٹرل سنی وقف بورڈ نے ابھی تک اراضی کے حصول کے معاملے پر فیصلہ نہیں کیاہے۔ تاہم بورڈ نے کہا کہ جب حکومت مسجدکے لیے پانچ ایکڑ اراضی کی تجویز پیش کرے گی تب اس پر غور کیا جائے گا۔ دیکھنا یہ ہے کہ مسلم جماعتیں زمین لیتی ہیں یا نہیں۔

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker