ہندوستان

نرمل میں شہریت ترمیمی بل کے خلاف کل جماعتی احتجاج

نرمل ،11/ڈسمبر 2019 ،ڈسٹرکٹ( بصیرت نیوز بیورو)
کاروانِ امن و انصاف نرمل یونٹ کے بیانر تلے آج بتاریخ 11/ڈسمبر 2019 بروزِ منگل دوپہر دو بجے، لوک سبھا میں منظور شدہ شہریت ترمیمی بل 2019 کے خلاف ، شہر نرمل کے تمام مذہبی، سماجی وسیاسی جماعتوں کے ذمہ داران پر مشتمل ایک اعلیٰ سطحی وفد نے کلکٹر نرمل ایم پرشانتی صاحبہ کو ایک یادداشت پیش کی جس میں کہاگیا ہے کہ

جنابِ عالی قدر! شہریت ترمیم بل (CAB) 2019 لوک سبھا کے ذریعے پاس کر دیا گیا ہے۔ اس بل کو لے کر ملک کے تمام شہریوں؛ بہ طورِ خاص مسلمانوں میں مندرجہ ذیل وجوہات کی بناء پر متعدد خدشات پائے جا رہے ہیں:

1۔ یہ بل آئینِ ہند کی دفعہ 14 کی حقیقی روح کے منافی ہے۔ جس میں ملک کے تمام شہریوں کو مساوی حقوق دیے گئے ہیں۔

2۔ اس بل کے ذریعے کو مسلمانوں کو چھوڑ کر باقی سب سماج ہندو، بودھ، سکھ، عیسائی، جین، پارسی، جو پاکستان، افغانستان اور بنگلادیش سے بھارت آئے ہیں، ان کو شہریت مل جائے گی۔

3۔ ترمیم شہریت بل (CAB) 2019 دیگر ممالک سے لوگوں کو ہندوستان آنے پر ابھارتا ہے، یہ چیز ملک کی سالمیت کے لیے خطرناک ہے ۔

4۔ ترمیم شہریت بل (CAB) 2019 مذہب کی بنیاد پر شہریت دینے کی بات کرتا ہے، جو آئینِ ہند کی بنیادی روح کے منافی ہے۔

اس درخواست کے واسطے سے ہم آپ سے گزارش کرتے ہیں کہ ترمیم شہریت بل (CAB) 2019 فوری طور پر واپس لیا جائے۔ بہ صورتِ دیگر (Companions of Peace and Justice) ہم خیال تنظیموں کے ساتھ مل کر ایک عظیم ملک گیر تحریک کھڑی کرے گا۔
بعدازیں کلکٹر کیمپس کے روبرو ایک احتجاجی مظاہرہ کیا گیا جس میں مختلف احباب نے پرزور انداز میں اپنے خیالات کا اظہار کیا، اور CAB 2019 کی کاپیاں نذرآتش کی گئیں ۔

اس موقع پر کاروانِ امن و انصاف یونٹ نرمل کے ذمہ داران :مفتی احسان شاہ قاسمی ،مفتی عرفان اشاعتی ،شیخ شبیر سمیت، مولانا عبدالعلیم قاسمی نائب قاضی نرمل، خواجہ یوسف احمد معتمد مدرسہ روضۃ العلوم، مفتی الیاس احمدقاسمی جمعیۃ علماء ، مفتی فیصل قاسمی جنرل سیکرٹری جمعیۃ علماء نرمل، مفتی ریاض الدین انصاری ناظم عائشہ صدیقہ للبنات، مفتی کلیم الدین قاسمی، مولانا مبین احمد قاسمی امام وخطيب جامع مسجد نرمل، عظیم بن یحییٰ صدر مجلس نرمل،واجد احمد سابق نائب صدر نشین بلدیہ محمد مظہر معتمد، رفیع احمد قریشی، محمد عثمان کلام گنم سوسائٹی، نذیر احمد، کے علاوہ نوجوانوں کی کثیر تعداد موجود تھی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker