ہندوستان

این آرسی کے لفظ پرکہیں بات نہیں ہوئی،سپریم کورٹ نے کہاتوآسام میں کیا:مودی

نئی دہلی:22؍دسمبر( بی این ایس )
وزیر اعظم مودی نے آج دہلی کے رام لیلا میدان میں ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس سمیت پوری اپوزیشن پرکنفیوژن پھیلانے کا الزام عائد کیا۔ وزیر اعظم مودی نے کہاہے کہ میں 130 کروڑ لوگوں کو یہ بتانا چاہتا ہوں کہ این آر سی کے لفظ پر کہیں بھی بات نہیں ہوئی ہے۔ جب سپریم کورٹ نے کہا تو این آر سی کرنا پڑا۔ ہم نے اسے نہیں بنایا ، ہم نے پارلیمنٹ میں نہیں لایاہے اور نہ ہی میں کابینہ میں آیاہے۔ یہاں کوئی اصول و ضوابط طے نہیں ہیں۔ایسے میں سوال یہ ہے کہ امت شاہ نے بارہاپوررے ملک میں این آرسی لاگوکرنے کی بات کیوں کی؟وہ کھل کرپورے ملک میں این آرسی لاگوکرنے اورگھس پیٹھیوں کوباہرکرنے کی بات کہتے رہے ہیں۔کیاوزیراعظم کی طرف سے احتجاج کوروکنے کے لیے بیان دیاگیاہے؟۔ممکن ہے کہ ابھی ارادہ نہ ہولیکن امت شاہ 2024سے پہلے تک کی بات کہہ چکے ہیں۔مودی اوران کے وزراء یہ بھی نہیں بتارہے ہیں کہ آسام این آرسی کے بعدغیرمسلموں کوتواس قانون سے شہریت مل جائے گی لیکن کیاآسام میں ان مسلمانوں کوشہریت ملے گی؟اوراگرنہیں ملے گی توکیایہ مذہبی بنیادپرامتیازہے یانہیں؟۔مودی نے یہ بھی کہاہے کہ کانگریس اور اس کے اتحادی ، شہروں میں رہنے والے کچھ پڑھے لکھے نکسل افواہیں پھیلارہے ہیں کہ تمام مسلمانوں کو حراستی مرکز بھیج دیا جائے گا۔ یک طرفہ جھوٹ پھیل رہا ہے؟ اسے ایک بار پڑھیں۔ جو لوگ اب بھی الجھن میں ہیں وہ کہیں گے کہ کانگریس اور اربن نکسلائیوں کے ذریعہ پھیلائی جانے والی افواہیں جھوٹی ہیں اور مذموم عزائم سے بھری ہیں۔وزیر برائے مودی مودی نے کہاہے کہ شہریت ترمیمی قانون ہندوستان کے کسی شہری کے لیے نہیں ،خواہ ہندوہوںیامسلمان۔ یہ بات پارلیمنٹ میں بھی کہی گئی ہے۔ اس قانون کا ملک کے 130 کروڑ عوام سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ این آر سی کے بارے میں بھی جھوٹ بولا جارہا ہے۔ یہ کانگریس کے وقت میں بنایا گیا تھا ، جب آپ سوتے تھے۔ جب ایک طرف مکان دینے کاقانون موجود ہے تو کیا آپ دوسری طرف سے آپ کو ملک بدرکرنے کے لیے کام کریں گے؟ این آر سی بنایا جارہاہے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ شہریت کے قانون اور این آر سی دونوں کا ہندوستان کی سرزمین کے مسلمانوں سے کوئی لینادینانہیں ہے۔لیکن وزیراعظم نے ہندوستان کی سرزمین کے مسلمانوں کالفظ استعمال کیاہے ،سوال یہ ہے کہ جب این ٓآرسی لگادیں گے توانھیں گھس پیٹھیے کہہ کرقانون کااطلاق کیاجاسکتاہے ؟کیااس وقت نہیں کہیں گے کہ ہم نے ہندوستانی شہریوں کی بات کی تھی ،یہ توگھس پیٹھیے ہیں۔پی ایم مودی نے کہا کہ یہ لوگ کس حد تک اپنی خودغرضی ،اپنی سیاست کے لیے جارہے ہیں ، انہوں نے یہ سب گذشتہ ہفتے دیکھاہے۔ جو بیانات دیئے گئے ، غلط ویڈیوز ، اشتعال انگیز چیزیں ، اونچے درجے پر بیٹھے لوگوں نے اسے سوشل میڈیا پر ڈال کر الجھن اور آگ پھیلانے کا جرم پھیلادیا۔

Tags
Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker