ہندوستان

بی جے پی اور کانگریسی لیڈران اپنے بچوں کے لیے لابنگ میں مصروف

نئی دہلی:12جنوری(بی این ایس )
اسمبلی انتخابات میں بی جے پی، آپ اور کانگریس 70 اسمبلی سیٹوں کی جنگ جیتنے کے لیے مسلسل میٹنگیں کر رہی ہیں۔بی جے پی اور کانگریس کے پاس پرانے لیڈروں کی فوج ہے لیکن دونوں پارٹی نوجوان شرکت بڑھانے کے لیے نئی توانائی اتارناچاہتی ہے۔ایسے میں دونوں جماعتوں کے اندر ایک درجن سے زیادہ ایسے لیڈر ہیں جو سیٹ کی وراثت بڑھانے کے لیے بیٹی بیٹا یا خاندان کے کسی دوسرے رکن کودیناچاہتے ہیں۔کانگریس ریاستی صدر سبھاش چوپڑا، سابق ریاستی صدر جے پی اگروال پوری طاقت سے بیٹی اور بیٹے کے لیے مصروف ہیں تو بی جے پی میں سابق وزیراعلیٰ مدن لال کھرانہ کے بیٹے اورسابق ریاستی صدر آنجہانی ماگیرام گرگ کے بیٹے کو بھی ٹکٹ دیئے جانے کی بحث ہے۔دہلی بی جے پی کے سابق صوبائی صدر مانگے رام گرگ کا خاندان بھی بیٹے ستیش گرگ کے لیے ٹکٹ مانگ رہاہے۔بلی ماران سے سابق ممبر اسمبلی موتی لال بہولتا سوڑھی کے لیے اسی نشست سے ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔جگدیش مکھی کی سیٹ جنک پوری رہی ہے۔وہ بیٹے اتل مکھی کے لیے ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔سابق ممبر اسمبلی برہم سنگھ تور چھتر پور سے بیٹے وکاس تورکے لیے ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔بی جے پی کے ایک بڑے لیڈر نے کہاہے کہ کنبہ پروری کو فروغ نہیں دیں گے لیکن امیدوار صاف شبیہ کا ہونے کے ساتھ پارٹی میں بڑی شراکت دینے والے کے خاندان سے منسلک رہاہے۔بچوں کے لیے ٹکٹ مانگنے والوں میں ریاستی صدر سبھاش چوپڑا اور سابق ریاستی صدر جے پی اگروال کا نام سب سے اوپرہے۔ممبراسمبلی رہے حسن احمد بیٹے علی مہندی کے لیے ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔دہلی اسمبلی کے سابق صدر ڈاکٹر شاستری بیٹی پرینکا سنگھ کی ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔سابق ممبر اسمبلی کنور کرن سنگھ کی بیٹی آکانکن ولاکے لیے ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔سابق ممبرپارلیمنٹ سجن کمار کے بیٹے جگپرویش اور مہابل مشرا اپنے بیٹے ونے مشراکے لیے ٹکٹ مانگ رہے ہیں۔سابق ممبر اسمبلی متین احمد، سابق ایم پی پرویز ہاشمی، صدر بازار سے سابق ممبر اسمبلی راجیش جین بھی شروع میں بچوں کی پیروی میں تھے لیکن اب یہ خود میدان میں اترنا چاہتے ہیں۔

Tags
Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker