ہندوستان

دہلی انتخابات سے پہلے جے پی نڈابی جے پی کے صدربن سکتے ہیں

نئی دہلی:12جنوری(بی این ایس )
جے پی نڈا اسی مہینے بی جے پی کے قومی صدر بن سکتے ہیں۔دوتاریخوں پر غوروفکرجاری ہے۔19 جنوری یا پھر 22 جنوری۔پارٹی کی مرکزی قیادت کادل دہلی الیکشن سے پہلے ہی نڈا کو صدر بنانے کاہے۔پہلے بحث تھی کہ انتخابات کے بعدانہیں یہ ذمہ داری دی جاسکتی ہے۔لیکن اب حکمت عملی بدل گئی ہے۔ایساماناجارہاہے کہ14 جنوری سے پہلے کا وقت شبھ نہیں ہوتاہے۔کوئی نیا کام اس دوران شروع نہیں کرتے ہیں۔ اسی لیے بی جے پی میں ضلع سے لے کر صوبہ سطح تک عہدوں کے انتخابات پر روک ہے۔کاغذی کارروائی تقریباََمکمل کرلی گئی ہے۔مکرسنکرانتی کے فوراََ بعدنتائج کا اعلان شروع ہوجائے گا۔بتایا گیا ہے کہ 18 جنوری تک 50 فیصد ریاستوں میں صدر منتخب ہو جائیں گے۔پارٹی کے آئین کے مطابق نصف ریاستوں میں انتخابات کے بعد ہی قومی صدر منتخب ہو سکتا ہے۔پتہ چلا ہے کہ 19 فروری تک 80 فیصد ریاستوں کے انتخابات ہو جائیں گے۔پہلے اس بات کی تیاری تھی کہ جے پی نڈا کو دہلی انتخابات کے بعد صدر بنایا جائے۔تب تک امت شاہ ہی اس عہدے پر بنے رہیں۔لیکن اب معلومات مل رہی ہیں کہ پلان تبدیل کر دیاہے۔یہ کہا گیا ہے کہ دہلی کے انتخابات سے تنظیم کے انتخابات پر کوئی فرق نہیں پڑتاہے۔ اگر نڈا منتخب کر لیے گئے تو وہ بی جے پی کے 11 ویں صدرہوں گے۔اب وہ پارٹی کے ایگزیکٹو چیئرمین ہیں۔جے پی نڈا کالج کے دنوں سے ہی بی جے پی سے منسلک کر رہے ہیں۔1993 میں وہ پہلی بارہماچل پردیش سے پارٹی کے رکن اسمبلی منتخب ہوئے۔پھر کئی حکومتوں میں وزیر رہے۔2012 میں نڈا راجیہ سبھا کے ایم پی بنے۔پھر مرکز میں مودی حکومت میں وزیرصحت بنائے گئے۔پارٹی کے قومی جنرل سکریٹری رہے. یوپی کے انچارج رہے۔اب وہ پارٹی کے سب سے بڑے عہدے پرپہنچیں گے۔ اسی سال کے آخر میں بہار میں اسمبلی کے انتخابات ہونے ہیں۔پھر اگلے سال بنگال کی باری ہے۔نڈا کے سامنے سب سے بڑا چیلنج ریاستوں میں پارٹی کے لیے بہتر نتائج لانے کاہوگا۔

Tags
Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker