ہندوستان

جلگاؤں مسلم منچ کا احتجاج پچیسویں دن میں داخل،101 جوڑوں نے متنازعہ قوانین کی مذمت کی،ضلع کلکٹر کو مکتوب پیش کیا

جلگاؤں (ساجد مرزا کی رپورٹ) جلگاؤں مسلم منچ کی قیادت میں شہریت ترمیمی قانون،این پی آر اور این آرسی کی منسوخی کے مطالبے کو لے کر احتجاج سنیچر کے روز پچیسویں دن میں داخل ہوگیا ۔آج 25 ویں دن احتجاج میں 101 ایک بزرگ و نوجوان جوڑوں نے شرکت کی اور متنازعہ قوانین کی منسوخی کا مطالبہ کیا۔خواتین کا کہنا تھا کہ مودی جی ملک کی عوام کو مسائل میں مت الجھاؤ۔اس دوران جم کر نعرے بازی کی گئی۔مہنگائی کم کرو خواتین کو تحفظ فراہم کرو ،ظلم تشدد بند کرو،ریلوے ٹریک واپس دو جیسے نعرے لگائے گئے۔احتجاج کے دوران فاروق شیخ ,پر تیبھا شندے ,عبدالکریم سالار،عبدالغفار ملک ،مولانا مزمل، فیروز ملتانی، علاودین پنجاری ، پروفیسر ذاکرعلی، محمد سعد ،ساجد خان اور وقار شیخ وغیرہ نے مظاہرین کی رہنمائی فرمائی۔اس دوران شوبھا ہنڈو رے، ودیہ سونار،اشونی ہنڈورے،بھارتی ہنڈو ر ے،دینکر بابو راؤ،نودیتا تاٹھےکے علاوہ عبدالکریم سالار۔رخسانہ بی ،فاروق شیخ۔ہاجرہ شیخ،انور شکلگر۔ روبینہ شکلگر،جاوید صدیقی ۔فردوس صدیقی،ذاکر حسین ۔نکہت جہاں،عرفان اقبال ۔فر ح سمر،عرفان عطااللہ خان ۔ممتاز خان،شیخ افضل۔مہرالنساء شیخ،ابراہیم پنجا ری ۔نجمہ پنجاری،واصف خان ۔کہکشاں انجم،روشن مشتاق ۔شیرین بانو،محمد رضوان شیخ ۔الفیہ بی،نوید کھاٹک۔ شبانہ بی،عتیق احمد۔ روبینہ انجم،محمد ایوب۔ شمیم بانو،شوکت علی۔ حنا قاضی،مزمل الدین ندوی۔ظہرہ جبین قاضی،شیخ ظہور ۔قمر النساء بی،تسلیم خان ۔عائشہ پروین و دیگر مرد و خواتین حضرات موجود تھے۔خواتین کے وفد نے صدر جمہوریہ ہند کوضلع ڈپٹی کلکٹر کے توسط سے مکتوب پیش کیا اور متنازع قوانین کی منسوخی کا پر زور مطالبہ کیا۔

Tags

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker