ہندوستان

کشمیرمیں انٹرنیٹ پابندی پرنیتی آیوگ کے ممبرکامتنازعہ بیان،کہا،نیٹ بندہونے سے کیافرق پڑتاہے ،گندی فلمیں ہی تودیکھتے ہیں

نئی دہلی:19؍جنوری(بی این ایس)کشمیرمیں انٹرنیٹ پرلگی پابندی کولے کرنیتی آیوگ کے ممبراورسابق ڈی آرڈی اوچیف وی کے سارسوت نے ایک متنازعہ بیان دیاہے۔انہوں نے اپنے بیان میں کہاہے کہ اگرکشمیرمیں انٹرنیٹ بندہے تواس سے کیافرق پڑتاہے ویسے بھی انٹرنیٹ پرگندی فلمیں ہی دیکھی جاتی ہیں۔انہوں نے کہااگرکشمیرمیں انٹرنیٹ نہ ہوتوکیافرق پڑتاہے؟آپ انٹرنیٹ پرکیادیکھتے ہیں؟وہاں کیاای ٹیلنگ ہورہی ہے؟گندی فلمیں دیکھنے کے علاوہ آپ اس پرکچھ بھی نہیں کرتے ہیں۔
5؍اگست کوجموں کشمیرریاست کاخصوصی درجہ ختم کرنے کے ساتھ ہی مرکزی سرکارنے وہاں انٹرنیٹ کے ساتھ موبائل اوربراڈبینڈسروسزپرپوری طرح سے پابندی لگادی تھی۔سنیچرکوہی وادی میں سبھی لوکل پریپیڈ موبائل سروسزکی بحالی کی گئی ہے۔وہاں پری پیڈکال،ایس ایم ایس اور2جی انٹرنیٹ سروسزشروع ہوگئی ہیں۔
سارسوت نے سیاسی رہنماؤں کے جموں کشمیردورے کولے کربھی سوال اٹھایاہے۔انہوں نے کہا کہ سیاسی رہنماکشمیرکیوں جاناچاہتے ہیں؟وہ کشمیرمیں بھی دہلی کی طرح سڑکوں پرہورہے احتجاج اورمظاہروں کوپھرسے شروع کرناچاہتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ سیاسی رہنمااحتجاج اورمظاہروں کوہوادینے کے لئے سوشل میڈیاکااستعمال کرتے ہیں۔
واضح رہے کہ بی جے پی نے جموں کشمیرکادورہ کرنے اوررابطہ مہم چلانے کامنصوبہ بنایاہے۔اس کے لئے 18سے 24 جنوری کے درمیان اسمرتی ایرانی،روی شنکرپرساد،پیوش گویل،جنرل وی کے سنگھ سمیت 36وزراء ریاست کادورہ کررہے ہیں۔یہ سبھی وزراء کے الگ الگ علاقوں میں جاکرآرٹیکل 370 کوکشمیرسے ہٹائے جانے کے بعدکے اثرات پرلوگوں سے بات کریں گے اوراس خطہ کے لئے حکومت کے ذریعہ چلائے جارہے منصوبوں کے بارے میں جانکاری دیں گے۔اس کے لئے 51دورے جموں خطہ کے لئے ہے اورکشمیروادی کے لئے صرف 8دورے ہیں۔

Tags

Sajid Qasmi

غفران ساجد قاسمی تعلیمی لیاقت : فاضل دارالعلوم دیوبند بانی چیف ایڈیٹر بصیرت آن لائن بانی چیف ایڈیٹر ہفت روزہ ملی بصیرت ممبئی بانی و صدر رابطہ صحافت اسلامی ہند بانی و صدر بصیرت فاؤنڈیشن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker