ہندوستان

کالے قوانین کو لیکر باشندگانِ سیتامڑھی کا غیر میعادی آندولن جاری

مولا نگر سیتامڑھی ۲۵/ جنوری (سعید الرحمن سعدی) سیتامڑھی کی علم پرور اور مردم خیز و باشعور بستی مولانگر میں 21 جنوری 2020 بروز منگل سے “این آر سی،این پی آر اور سی اے اے” کے خلاف مرد و خواتین کا غیر میعادی پر امن احتجاج جاری ہے، جس میں بلا تفریق مذہب و مسلک اطراف و جوانب کی دیگر بستیوں مانک پور، بر گچھیا ، رام پور، بچھارپور وغیرہ کے جانباز شہریوں سمیت پورے جوش و خروش کے ساتھ اس اندھے قانون کا ورودھ کیا جا رہا ہے۔

احتجاج میں شامل مظاہرین کے ہاتھوں میں بینرز ، پلے کارڈز، کینڈلز اور لبوں پر انقلابی اور حب الوطنی نعرے درج ہیں، دن میں دھوپ کی تمازت اور رات میں سردی کی شدت کے باوجود ان کے ارادے اٹل اور عزائم آہنی نظر آ رہے ہیں،
اطلاع کے مطابق مولانگر میں آج مظاہرہ کا پانچواں دن ہے، دھرنے پر بیٹھے لوگوں کا یہ عزم ہے کہ یہ احتجاج اس وقت تک چلتا رہے گا جب تک کے اس کا لے قانون کو واپس نہیں لیا جاتا۔
مظاہرین کو دیکھ لگتا ہے کہ مظاہرہ میں شامل ہر فرد بجائے خود ایک آواز، ایک انقلاب اور ایک تحریک ہے ؛لیکن علاقے کی بااثر شخصیات بھی پیش پیش دکھائی دے رہے ہیں وہیں سابق ضلع پریشد و بے باک نیتا جناب امجد حسین مولانگری، مشہور شاعر جناب اشرف صاحب مولانگری، جناب ظفر اللہ صاحب مولانگری سماجی کارکن، جناب
محمد علی صاحب سماجی کارکن، مولانا امتیاز صاحب قاسمی امام جامع مسجد مولانگر، ضلع سیتامڑھی کے جانباز عالم و قائد جناب مولانا اصغر علی صاحب صدیقی قاسمی، مولانا ابو بکر صاحب قاسمی ڈائریکٹر قاسمی پبلک اسکول، مولانا شبیر صاحب قاسمی صدر المدرسین جامعۃ المؤمنات رام پور خرد وغیرہ حضرات اپنی گرمی خطابت اور قائدانہ بصیرت سے اس احتجاج کو ہر ممکن قوت بخشتے نظر آ رہے ہیں۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker