ہندوستان

کالے قانون کے خلاف بنائی جانے والی انسانی زنجیر نے ایک تاریخ رقم کردی، مظفرپور شہر سمیت قرب و جوار میں بھی ملی انسانی زنجیر کو سیاسی سماجی ملی قائدین کی حمایت

مظفرپور/25/1/2020/ ( عبدالخالق القاسمی) امیر شریعت حضرت مولانا ولی رحمانی صاحب کے حکم پر کالے قانون کے خلاف ریاست بہار میں انسانی زنجیر بنائی گئی جو پوری طرح کامیاب رہی,اس انسانی زنجیری مہم میں بڑی تعداد میں برادران وطن نے بھی شرکت کی اور کالے قانون کے خلاف آواز بلند کیا,مظفرپور کالے قانون کے خلاف بھاکپا مالے اور سنی علماء کونسل اورائی کی حمایت نے چار چاند لگا دیا,بھاکپا مالے نے جمعہ کو ہی ریاست بہار کے کونے کونے اور چپہ چپہ میں سی اےاے,این آر سی,این پی آر کے خلاف انسانی زنجیر بنانے کا اعلان کردیا تھا,جسے ریاست بہار کے امن پسند ہندوستانی نے پرزور حمایت کی,اور اس انسانی زنجیر کو کامیاب بنانے میں اہم رول ادا کیا,مظفرپور کا اسمبلی حلقہ اورائی میں سنی علماء کونسل کی حمایت حاصل رہی اور بڑی تعداد میں سیاسی سماجی و ملی قائدین نے کالے قانون کے خلاف انسانی زنجیری مہم کو کامیاب بنایا,انسانی زنجیری مہم کا آغاز 2 بجے ہوا اور تین بجے اختتام ہو گیا,مظفرپور کے دیہی حلقہ مصر اولیاء,سہسولی,رامپور سگھری بینی باد,سمیت مختلف جگہوں پر یہ انسانی زنجیر بنائی گئی,زنجیری مہم شریک تمام لوگوں کے سر اور جسم پر نو سی اےاے,نو این آر سی,نو این آر پی کا سلوگن لگا ہوا تھا,جسے دیکھکر دل باغ باغ ہورہا تھا,وہیں اس مہم میں مدارس اسلامیہ کے طلباء اور اساتذہ ,اور اسکولی طلباء و طالبات سمیت مرد و خواتین,بچوں ضعیفوں نے بھی حصہ لیا,سب کی زبان پر بس ایک ہی نعرہ تھا,سی اےاے,این آر سی,این پی آر واپس لو,انقلاب زندہ باد,واضح رہے کہ اس سے قبل ریاست بہار میں ڈبل انجن کی حکومت نے جل جیون ہریالی مہم کے تحت کم عمر لڑکے لڑکی کی شادی,جہیز اور نشہ پر مورخہ 19 جنوری کو انسانی زنجیری بنایا تھا جسے یہاں کے امن پسند لوگوں نے ناکار دیا تھا

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close

Adblock Detected

Please consider supporting us by disabling your ad blocker