Baseerat Online News Portal
Browsing Category

شعروادب

احمدؔ وَلی ، ابن الوَلی، فخرِ زَماں، روشن جبیں

از: افتخار رحمانی فاخرؔ،(احمد فاخرؔ) دہلیاحمدؔ وَلی ، ابن الوَلی، فخرِ زَماں، روشن جبیںاَخلاق کے عالی ہیں وہ، مہر وَفا مہرِ مبیںگرچہ ہمیں اب سایۂ حضرت ولیؒ حاصل نہیںاس سانحہ سے بالیقیں ہے غمزدہ چرخ و…
مزید پڑھیں ....

اب مکمل میری حسرت کیجئے

نعت شریفاب مکمل میری حسرت کیجئے مصطفی ایک بار رحمت کیجیےہے دل ناساز کی یہ آرزو طیبہ میں مدفن عنایت کیجیےآپ کی سیرت ہے شمع راہ حق ہم ہیں گم گذشتہ ہدایت کیجیےزندگی ہو جائے گی سن تابناک نور سے رب کے محبت کیجئےجا کے…
مزید پڑھیں ....

غزل

خوابوں کی دیکھتے نہیں تعبیر، ہم فقیر کرتے ہیں چشم و نوَم کو تسخیر، ہم فقیر توحيدِ حسن و عشق تو ایمانِ اصل ہے کرتے نہیں کسی کی بھی تکفیر، ہم فقیر بادِ سموم چلتی ہے جب خیمہ گاہ میں اپنی غزل کو کرتے ہیں شہتیر ،ہم فقیر نخلِ ادب کی لاج
مزید پڑھیں ....

آبرو ماؤں کی یارو! ہم بچاکر آگئے

نظم نگار: انسؔ بجنوریآبرو ماؤں کی یارو! ہم بچاکر آگئے اپنی سرحد سے درندوں کو بھگاکر آگئےحق کا نعرہ آسماں پر ہم لگاکر آگئے پرچم توحید کو پھر سے اٹھاکر آگئےتوڑ ڈالا کفر کے ایوان کو افغان میں نغمہ الاللہ کا سب کو سناکر…
مزید پڑھیں ....

قربانی! کلام آفتاب اظہر صدیقی

از: آفتاب اظہر صدیقیخدا کی خوشنودی حاصل ہو جس سے وہ ہے قربانی عمل اسلام پر کامل ہو جس سے وہ ہے قربانیخدا کی راہ میں ہر کچھ لٹا دینا ہے قربانی خدا کے واسطے خود کو مٹا دینا ہے قربانیخلیل اللہ کی سنت کو دہرانا ہے قربانی رسول…
مزید پڑھیں ....

تم ہی بتا دو! (نظم)

آمنہ جبیں ( بہاولنگر)سنو نا !!کیسے بھلاؤں تجھ کوکیسے کروں جدا خود سےمیری روح کا حصہ ہومیری لمبی مسافت میںکوئی زادِ راہ نہیںبس اک تم ہی سب ساماں ہوجیسا تم چاہتے ہومیں ایسا کر…
مزید پڑھیں ....

چاہتے ہیں سکوں طلب تقسیم. (غزل)

غزلچاہتے ہیں سکوں طلب تقسیم دولتِ درد ہوگی کب تقسیممیرے حصّے میں ’’شب بخیر‘‘ آیا لفظ وہ کر رہے تھے جب تقسیمدونوں ہی مضطرب ہوئے دو چند بے قراری ہوئی عجب تقسیمقد میں آگے نکل گئے بچّے ہم کو ہونا پڑے نہ اب تقسیمہو گئے…
مزید پڑھیں ....

خونِ دل سے اِسے اب جلائیں گے ہم

غزل افتخاررحمانی فاخر نقش ہائے ستم کیوں مٹائیں گے ہم اَرمُغاں ہیں، یہ دِل سے لگائیں گے ہم تم نہ آؤگے ، تو چشم ِ نم کا چراغ خونِ دل سے اِسے اب جلائیں گے ہم قلزم بے کراں ہے ہماری یہ آنکھ اشک ِ فرقت مسلسل بہائیں گے ہم شوق ہے نا
مزید پڑھیں ....