Baseerat Online News Portal
Browsing Category

زبان وادب

شربتِ ضبط آئے راس مجھے پی نہ جائے کہیں یہ پیاس مجھے

غزل افتخار راغب، دوحہ قطر شربتِ ضبط آئے راس مجھے پی نہ جائے کہیں یہ پیاس مجھے تم سے شکوے کا اب دماغ کہاں کتنا رکھتے ہو بد حواس مجھے تیرے دل کا مکیں نہیں، نہ سہی رہنے دے اپنے آس پاس مجھے اب نہیں رکھنی تم سے آس کوئی اب نہیں…
مزید پڑھیں ....

جاگ اٹھا انسان “۔ (کہانی )

. از :_شیبا کوثر (آرہ ،بہار )انڈیا ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سڑک کے کنارے ایک چھوٹی سی گندی گلی ہے جس میں دوسرے غریبوں کے ساتھ وہ ایک گونگا آپا ہج بھی اپنی بیوی کے ساتھ رہتا ہے ۔یہ آپاہج محنت مزدور ی…
مزید پڑھیں ....

نظم! وہ لمحہ

"وہ لمحہ "( نظم ) از : شیبا کوثر (آر ہ ،بہار )انڈیا ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیا کروں۔۔۔۔۔؟ رشک کروں یا ماتم کروں وہ ایک لمحہ حسرت بھرا لمحہ عجیب منظر تھا ذہن نے کبھی سوچا نہ تھا زیر…
مزید پڑھیں ....

پھر سے ملن کے سارے جتن بے اثر رہے بیچن ہم ادھر وہ پریشاں ادھر رہے

"غزل " از _شیبا کوثر (آرہ ،بہار )۔ پھر سے ملن کے سارے جتن بے اثر رہے بیچن ہم ادھر وہ پریشاں ادھر رہے میں ہچکچا رہ گئی مقتل کے سامنے کل تھے میرے ہی لوگ جو سینا سپر رہے جنکے ستم سے گھر جلا بچے ہوئے یتم وہ کہ رہے ہیں ہم تو مگر بے…
مزید پڑھیں ....

تم کو کبھی رقیب سے فرصت ملے تو دیکھنا دل کو مرے قریب سے فرصت ملے تو دیکھنا 

غزل تم کو کبھی رقیب سے فرصت ملے تو دیکھنا دل کو مرے قریب سے فرصت ملے تو دیکھنا ظالم ہی کے قریب ہیں، مانا کہ ہم عجیب ہیں رہتے ہیں کیوں عجیب سے فرصت ملے تو دیکھنا کیسی خلش، کسک ہے کیوں، معدوم وہ…
مزید پڑھیں ....

اے کسانو! دیش کی تم آن وبان وشان ہو اے کسانو! دیش کی تم جان ہو پہچان ہو

کسان اے کسانو! دیش کی تم آن وبان وشان ہو اے کسانو! دیش کی تم جان ہو پہچان ہو یہ ہری کھیتی، ہرے پودے، ہرے رنگ چمن تم سے ہیں آباد یہ کہسار یہ کوہ ودمن خوں پسینے سے بہت سینچا ہے یہ صحن چمن تم اگر آباد ہو، آباد ہیں گنگ و…
مزید پڑھیں ....

دیکھ لے اپنے رنگ و بوٗ مجھ میں کس قدر بس گیا ہے توٗ مجھ میں 

غزل افتخار راغب، دوحہ قطر ، دیکھ لے اپنے رنگ و بوٗ مجھ میں کس قدر بس گیا ہے توٗ مجھ میں گھُٹنے لگتا ہے عافیت کا دَم رنج ہوتا ہے سرخ روٗ مجھ میں اُن کو تیرے سراغ سے ہے غرَض اور ڈھونڈیں گے کیا عدوٗ…
مزید پڑھیں ....

ہو جائے ہر ملال دسمبر کے ساتھ ختم ہر سال جنوری تجھے بخشے خوشی کا سال

افتخار راغب دوحہ، قطر غزل دشتِ جُنوں میں دوڑتا پھرتا ہے اک غزال کس طرح ہو بحال طبیعت میں اعتدال تجھ سا حسیں جہانِ تخیّل میں بھی کہاں کیوں ڈھونڈتا عبث میں کہیں بھی تری مثال مضبوط اِس قدر ہو…
مزید پڑھیں ....

میں سچ بتاؤں تو بھاتے ہیں ناقدین مجھے ، عروج دیتے ہیں میرے مخالفین مجھے

شاعر :سلیم صدیقی شوق پورنوی میں سچ بتاؤں تو بھاتے ہیں ناقدین مجھے عروج دیتے ہیں میرے مخالفین مجھے اتر گیا تھا بغاوت پہ اس لیے میں بھی کہ آگے بڑھنے نہ دیتے تھے قائدین مجھے کرشمہ اپنے ہنر کا وہ یوں دکھاتا ہے…
مزید پڑھیں ....